You are here
Home > Uncategorized > واجد ضیا کو آئی جی سندھ بنائے جانے کا امکان ، وفاقی حکومت نے 3 نام تجویز کردیے

واجد ضیا کو آئی جی سندھ بنائے جانے کا امکان ، وفاقی حکومت نے 3 نام تجویز کردیے

کراچی (ویب  ڈیسک) وفاقی حکومت کی جانب سے آئی جی سندھ کیلئے 3 نام تجویز کردیے گئے ہیں ۔ آئی جی مشتاق مہر کو ہٹا کر ڈی جی ایف آئی اے واجد ضیاء کو آئی جی سندھ بنائے جانے کا امکان ظاہر کیا جا رہا ہے ۔ اس کے ساتھ ہی آئی جی کے پی کے ثناء اللہ عباسی اور سابق آئی جی بلوچستان معظم جاہ انصاری کے نام بھی آئی جی سندھ کے لیے بھجوا دیے گئے ۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق آئی جی سندھ مشتاق مہر کے معاملے پر سندھ اور وفاق کے درمیان تنازع شدت اختیار کرگیا ہے ، آئی جی کی تبدیلی کے حوالے سے وفاقی حکومت نے انسپکٹر جنرل سندھ کے عہدے کیلئے صوبائی حکومت کو 3 نام تجویز کردیئے ہیں ۔ ذرائع کے مطابق وفاق کی جانب سے سندھ پولیس چیف کیلئے جو نام تجویز کئے گئے ہیں ان میں ڈی جی ایف آئی اے واجد ضیاء، آئی جی خیبرپختونخوا ڈاکٹر ثناء اللہ عباسی اور سابق آئی جی بلوچستان معظم جاہ انصاری شامل ہیں۔

خیال رہے کہ سندھ اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر حلیم عادل شیخ کی گزشتہ ہفتے گرفتاری کے بعد وفاق اور سندھ حکومت کے درمیان اختلافات سامنے آئے۔ ان پر الزام تھا کہ انہوں نے انتخابی عمل میں رکاوٹ ڈالنے اور میمن گوٹھ میں انسداد تجاوزات آپریشن میں مداخلت کی تھی۔ واضح رہے کہ گزشتہ دنوں خبر سامنے آئی تھی کہ گورنر سندھ عمران اسماعیل نے آئی جی سندھ کو تبدیل کرنے کا مطالبہ کردیا ہے، آئی جی سندھ کی تبدیلی کیلئے وزیر اعظم کو خط لکھ دیا ہے، وفاقی حکومت کو کوئی انتہائی اقدام اٹھانے پر مجبور نہ کیا جائے، گورنرراج لگانے کی کوئی تجویز نہیں ہے، وفاق اور گورنر سندھ ایسا بالکل نہیں سوچ رہے، ہماری کوشش ہے کہ سندھ میں مظالم کا خاتمہ کیا جائے۔

انہوں نے کہا کہ وفاقی حکومت کی جانب سے انتہائی قدم آئی جی کی تبدیلی ہوسکتی ہے، چیف سیکرٹری اور آئی جی دونوں وفاق کے نمائندے ہیں، وہ یہ نہ سمجھیں کہ ان کا وفاق سے رابطہ ختم ہوگیا ہے، ان کو پارٹی نہیں بننا چاہیے بلکہ وفاق کے ساتھ ملکر کام کرنا چاہیے، میں نے وزیراعظم کو آئی جی سندھ کیخلاف خط لکھ دیا ہے،مشتاق مہر کو جب تعینات کیا گیا تو اس وقت بھی یہی تھا کہ سیاسی کام کریں گے، لیکن وہی ہوا جس کا خطرہ تھا، انہوں نے کہا کہ گورنر راج کا کوئی سلسلہ نہیں ہے، نہ ایسی کوئی تجویز زیر غور ہے، آئی جی سندھ فرائض کی انجام دہی میں بالکل ناکام نظر آئے ہیں ۔


Top