Categories
پاکستان

ضمانت منسوخ !آگ لگا کر ٹک ٹاک بنانے والی ٹک ٹاکر”ڈولی” کو عدالت کا بڑا جھٹکا

اسلام آباد(ویب ڈیسک) عدالت نے مارگلہ کے جنگل میں آگ لگا کر ٹک ٹاک بنانے والی خاتون ٹک ٹاکر کی درخواست ضمانت خارج کر دی۔ ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن کورٹ اسلام آباد میں جنگل میں آگ لگا کر ٹک ٹاک بنانے والی خاتون ٹک ٹاکر ڈولی کی درخواست ضمانت پر سماعت کے دوران تین دفعہ ملزمہ کو پکارا گیا

لیکن ٹک ٹاکر عدالت میں پیش نہ ہوئیں۔ جج نے ملزمہ کے وکیل سے سوال کیا کہ ملزمہ کدھر ہے؟ جس پر ملزمہ کے وکیل نے بتایا کہ ملزم ادھر ہی ہے، میں نے ٹرانسفر کی درخواست دی ہے۔ جج نے وکیل کو ہدایت کی کہ ملزمہ کو عدالت میں پیش کیا جائے، عدالتی اہلکار نے 3 بار ملزمہ کو بلایا لیکن وہ پیش نہ ہوئیں۔ وکیل ملزمہ نے کہا کہ مقدمہ میں جو دفعات لگی ہیں وہ یہ عدالت سن ہی نہیں سکتی۔ ایڈیشنل سیشن جج عابدہ سجاد نے خاتون ٹک ٹاکر کے پیش نہ ہونے پر ان کی درخواست ضمانت مسترد کر دی۔ درخواست ضمانت مسترد ہونے کے بعد پولیس کی نفری ملزمہ کو گرفتار کرنے کے لیے کمرہ عدالت کے باہر پہنچ گئی جبکہ ملزمہ ٹک ٹاکر عدالت پیش ہونے کے بجائے وکیل کے چیمبرمیں چلی گئی۔ واضح رہے کہ گزشتہ ہفتے مارگلہ کی پہاڑیوں پر آگ کے قریب ویڈیو بنانے والی خاتون ٹک ٹاک کر ڈالی کے خلاف اسلام آباد کے تھانہ کوہسار میں مقدمات درج کیے گئے تھے۔اس سے قبل ملزمہ ڈولی نے مارگلہ کی پہاڑیوں پر آگ لگانے کے معاملے پر خاتون ٹک ٹاکرنے لاہورکی مقامی عدالت سے ضمانت قبل ازگرفتاری حاصل کرلی۔ ٹک ٹاکر نوشین سعید عرف ڈولی نے مارگلہ کی پہاڑیوں پر آگ لگانے کے معاملے پر اسلام آباد میں درج ایف آئی آر میں گرفتاری سے محفوظ رہنے اور شامل تفتیش ہونے کیلئے لاہور ہائیکورٹ سے حفاظتی ضمانت حاصل کر لی۔ اسلام آباد کے تھانہ کوہسار میں سی ڈی اے کے محکمہ ماحولیات کے افسر کی درخواست پر درج ٹک ٹاکر کے خلاف ایف آئی آر میں ٹک ٹاکر نے مارگلہ کی پہاڑیوں میں آگ لگا کر وڈیو بنانے کے کیس میں گرفتاری سے محفوظ رہنے کے لیے حفاظتی ضمانت حاصل کر لی۔

Categories
Uncategorized

آگ لگی تھی تو رپورٹ کرتیں ٹک ٹاک بنانی ضروری تھی؟ مشی خان “ڈولی”پر برس پڑیں

اسلام آباد(ویب ڈیسک) مارگلہ ہلز پر آگ لگاکر ٹک ٹاک بنانے والی ٹک ٹاکر کے وضاحتی بیان کو اداکارہ مشی خان نے جعلی قرار دے دیا۔ مشی خان نے انسٹاگرام اسٹوری پر ڈولی سے متعلق چلنے والی خبروں کی تصویر شیئر کرتے ہوئے رد عمل کااظہار کیا۔ انہوں نے لکھا کہ ٹک ٹاکر ڈولی نے اپنے ایک کمزور عمل کو

چھپانے کے لیے ایک جھوٹی کہانی بنائی ، یقین سے کہہ سکتی ہوں کہ اس نے جھوٹ کہا ہے۔ مشی خان نے ٹک ٹاکر کو مخاطب کرتے ہوئے لکھا کہ ڈولی آپ کو قدرت کے مطالعے اور کچھ عقل کی ضرورت ہے، اگر آگ لگی تھی تو رپورٹ کرتیں، ٹک ٹاک بنانی ضروری تھی؟ اداکارہ نے اپنی اسٹوری میں ڈولی کی ویڈیو کو مجرمانہ عمل قرار دیا۔ گزشتہ دنوں سوشل میڈیا پر ایک ویڈیو وائرل ہوئی تھی جس میں دیکھا گیا تھا کہ پہاڑی پر آگ لگی ہوئی ہے اور خاتون ٹک ٹاکر اس دوران ایک ویڈیو بنارہی ہے۔ مارگلہ ہلز پر جنگل کو آگ لگانے کی خبر میڈیا پر نشرہونے کے بعد پولیس نے کارروائی کرتے ہوئے ایک ٹک ٹاکر کو گرفتار کرلیا تاہم خاتون کی گرفتاری عمل میں نہیں لائی جاسکی ہے۔ خاتون نے اس معاملے پر وضاحت دیتے ہوئے کہا ہے کہ انہیں کافی سال ہوچکے ہیں نیشنل پارک کوہسار گئے ہوئے۔ ڈولی نے بتایا کہ وہ ہری پور سے میک اپ کی کلاس لے کر موٹروے سے جار رہی تھیں جب انہوں نے راستے میں ایک جگہ دیکھا کہ آگ لگی ہوئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ وہ اس حوالے سے ایک اور ویڈیو اپ لوڈ کریں گی جس میں اس شخص کو بھی دیکھا جاسکے گا جس نے مبینہ طور پر آگ لگائی۔ بعد ازاں انہوں نے ایک اور ویڈیو جاری کی جس میں ڈولی کو اسی مقام پر ان ہی کپڑوں میں دیکھا جاسکتا ہے جبکہ عقب میں آگ بھی لگی ہوئی ہے۔ بظاہر ایسا معلوم ہوتا ہے کہ یہ ویڈیو اسی روز بنائی گئی جس دن وائرل ہونے والی ٹک ٹاک ویڈیو شوٹ ہوئی۔ اس ویڈیو میں ڈولی کہہ رہی ہیں کہ وہ جب یہاں آئیں تو آگ لگی ہوئی تھی جس پر انہوں نے وہاں موجود شخص سے آگ کی وجہ پوچھی۔ اس کے بعد ڈولی

نے اس شخص سے کہا کہ آپ خود بتائیں آگ کی وجہ۔ اس موقع پر وہ شخص کہتا ہے کہ ’ہم نے یہاں اس لیے آگ لگایا ہے کہ یہاں بہت بڑے بڑے سانپ نکلتے ہیں، دو تین مرغی کے بچے بھی ہمارے کھا گئے ہیں، ہمارے بچوں کو خطرہ ہوتا ہے اس لیے ہم نے یہاں آگ لگائی۔‘

Categories
شوبز

پہاڑی پر آگ کس نے لگائی،ٹک ٹاکر ڈولی سامنے آگئی،بڑے ثبوت بھی پیش کر دیے

لاہور(ویب ڈیسک) گزشتہ دنوں سوشل میڈیا پر ایک ویڈیو وائرل ہوئی تھی جس میں دیکھا گیا تھا کہ پہاڑی پر آگ لگی ہوئی ہے اور معروف ٹک ٹاکر ڈولی اس پر پرفارم کر رہی ہیں۔ اس ویڈیو کے سامنے آنے کے بعد کہا گیا کہ یہ مارگلہ کی پہاڑی ہے جہاں ٹک ٹاکر نے اپنی ویڈیو پر ویوز اور لائکس کیلئے آگ لگائی۔

اس کے بعد خاتون ٹک ٹاکر کیخلاف اسلام آباد کے تھانہ کوہسار میں مقدمہ بھی درج کیا گیا لیکن ڈولی نے لاہور ہائیکورٹ سے ضمانت قبل از گرفتاری کروالی ہے۔ اب ڈولی نے اس پورے معاملے پر وضاحتی بیان جاری کیا ہے۔ آج جاری کی گئی ویڈیو میں ڈولی نے کہا کہ کافی سال ہوچکے ہیں نیشنل پارک کوہسار گئے ہوئے۔ بعد ازاں انہوں نے ایک اور ویڈیو جاری کی جس میں ڈولی کو اسی مقام پر ان ہی کپڑوں میں دیکھا جاسکتا ہے جبکہ عقب میں آگ بھی لگی ہوئی ہے۔ بظاہر ایسا معلوم ہوتا ہے کہ یہ ویڈیو اسی روز بنائی گئی جس دن وائرل ہونے والی ٹک ٹاک ویڈیو شوٹ ہوئی۔ بعد ازاں انہوں نے ایک اور ویڈیو جاری کی جس میں ڈولی کو اسی مقام پر ان ہی کپڑوں میں دیکھا جاسکتا ہے جبکہ عقب میں آگ بھی لگی ہوئی ہے۔ بظاہر ایسا معلوم ہوتا ہے کہ یہ ویڈیو اسی روز بنائی گئی جس دن وائرل ہونے والی ٹک ٹاک ویڈیو شوٹ ہوئی۔ اس ویڈیو میں ڈولی کہہ رہی ہیں کہ وہ جب یہاں آئیں تو آگ لگی ہوئی تھی جس پر انہوں نے وہاں موجود شخص سے آگ کی وجہ پوچھی۔ اس کے بعد ڈولی نے اس شخص سے کہا کہ آپ خود بتائیں آگ کی وجہ۔ اس موقع پر وہ شخص کہتا ہے کہ ’ہم نے یہاں اس لیے آگ لگایا ہے کہ یہاں بہت بڑے بڑے سانپ نکلتے ہیں، دو تین مرغی کے بچے بھی ہمارے کھا گئے ہیں، ہمارے بچوں کو خطرہ ہوتا ہے اس لیے ہم نے یہاں آگ لگائی۔‘ اس کے بعد ٹک ٹاکر ڈولی اپنے کیمرہ مین سے کہتی ہیں کہ ’سانپ نکلتے ہیں یہاں سے نکل۔‘

Categories
شوبز

جنگل میں آگ میں نے نہیں بلکہ۔۔۔معروف ٹک ٹاکر ڈولی سامنے آ گئیں ، ویڈیو بیان جاری کر دیا

مسترد کر دیا ہے۔ ڈولی اور اِن کی ٹیم پر جنگل میں مبینہ آگ لگا کر ٹک ٹاک بنانے پر مقدمہ درج ہے، مقدمے کے متن کے مطابق آگ لگنے کی جگہ نیشنل پارک کا علاقہ ہے جبکہ اس پر ڈولی کی وضاحت سامنے آئی ہے۔

ڈولی نے اپنے سوشل میڈیا اکاو¿نٹس پر نئی ویڈیو شیئر کی ہے جس میں وہ نیشنل پارک کے علاقے میں آگ لگانے کی تردید کر رہی ہیں۔ وہ اپنی گزشتہ ٹک ٹاک ویڈیوز میں نظر آنے والے مقام پر موجود ہیں۔ڈولی کا ویڈیو میں کہنا ہے کہ وہ جہاں کھڑی ہوئی ہیں وہ نیشنل پارک کوہسار نہیں بلکہ موٹروے ہے، ا±ن کے آنے سے قبل ہی یہ آگ یہاں لگی ہوئی تھی۔ویڈیو میں دیکھا جا سکتا ہے کہ ڈولی نے ثبوت کے طور پر پاس کھڑے شخص سے بھی آگ لگانے کی حقیقت بتانے کو کہا ہے۔ڈولی کے پاس کھڑے اس عام شہری کا ویڈیو میں کہنا ہے کہ اِن جھاڑیوں سے بہت بڑے بڑے سانپ نکل آتے ہیں اور ا±ن کے بچوں اور مویشیوں کو نقصان پہنچاتے ہیں۔شہری کا کہنا ہے کہ وہ یہاں پاس ہی رہتے ہیں، یہ آگ وہ اپنے گاو¿ں کے بچوں اور مویشیوں کو سانپوں کے حملوں سے بچانے کے لیے لگاتے ہیں۔ویڈیو کے آخر میں ڈولی سانپوں کا نام س±ن کر ڈر کر وہاں سے بھاگتے ہوئے شہری کا شکریہ ادا کر رہی ہیں۔