اسپارٹ فکسنگ کیس: سزا یافتہ کرکٹر شرجیل خان کے چاہنے والوں کے لیے بڑی خوشخبری آگئی

لاہور(نیوز ڈیسک ) پی ایس ایل اسپاٹ فکسنگ کیس میں سزا یافتہ کرکٹر شرجیل خان کی سزا 10 اگست کو ختم ہو گی۔ ترجمان پی سی بی کے مطابق سزا مکمل ہونے پر شرجیل خان کو ری ہیب پروگرام مکمل کرنا ہو گا جس کے لیے کرکٹر کی طرف سے تاحال کوئی رابطہ نہیں کیا گیا ہے۔

پاکستان کرکٹ بورڈ کے ترجمان نے کہا کہ ری ہیب مکمل ہونے پر شرجیل خان کوکرکٹ کھیلنےکی اجازت ہوگی۔دوسری جانب کرکٹر شرجیل خان کے وکیل شیغان اعجاز نے بتایا کہ ری ہیب پروگرام کیلیےجلد پی سی بی سے رابطہ کریں گے۔خیال رہے کہ اسپاٹ فکسنگ کیس میں کرکٹر شرجیل خان پر پاکستان کرکٹ بورڈ کوڈ کی پانچ شقوں کی خلاف ورزی کا الزام تھا جس کے بعد ان پر پانچ سال کی پابندی عائد کی گئی۔ جبکہ دوسری جانب ایک خبر کے مطابق انضمام الحق کی جانب سے چیف سلیکٹر کے عہدے سے استعفیٰ دیے جانے کے بعد چیئرمین سلیکشن کمیٹی کا عہدہ خالی ہو گیا ہے اور اس عہدے کے لیے سابق کوچز معین خان اور محسن خان کو فیورٹ قرار دیا جا رہا ہے۔ورلڈ کپ کے بعد پاکستانی ٹیم مینجمنٹ اور کرکٹ بورڈ میں تبدیلیوں کا سلسلہ شروع ہو چکا ہے اور انضمام الحق چیف سلیکٹر کا منصب چھوڑ چکے ہیں۔انضمام الحق نے گزشتہ روز پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا تھا کہ وہ چیف سلیکٹر کے عہدے پر مزید کام کرنے کے خواہشمند نہیں البتہ اگر انہیں کوئی اور ذمے داری گی گئی تو وہ بخوشی قبول کریں گے۔انضمام کے استعفے کے بعد سابق کھلاڑیوں نے اس عہدے کے حصول کے لیے اپنا اثرورسوخ استعمال کرنا شروع کردیا ہے اور چیئرمین سلیکشن کمیٹی کے عہدے کے لیے معین خان اور محسن خان کو مضبوط امیدوار قرار دیا جا رہا ہے۔محسن حسن خان پاکستان کرکٹ بورڈ کی کرکٹ کمیٹی کے سربراہ تھے لیکن انہوں نے گزشتہ ماہ اپنے عہدے سے استعفیٰ دے کر کسی اور عہدے پر کام کرنے کی خواہش ظاہر کی تھی۔ذرائع کےمطابق پاکستان کرکٹ بورڈ سلیکشن کمیٹی کے نئے ممبران کے اشتہار دے گا اور درخواست جمع کرانے والے کھلاڑیوں میں سے سلیکشن کمیٹی کے چیئرمین اور اراکین کا انتخاب کیا جائے گا۔ذرائع کےمطابق سابق کرکٹر محسن خان یا معین خان کو چیف سلیکٹر نامزد کیا جاسکتا ہے البتہ حتمی فیصلہ کرکٹ کمیٹی کے اجلاس کے بعد ہوگا۔