You are here
Home > اسپشیل اسٹوریز > حیران کن تاریخی حقائق

حیران کن تاریخی حقائق

لاہور (ویب ڈیسک) واصیلی بلوفن روسی سرکاری کلر کا نام گنیز بک آف ورلڈ ریکارڈز میں خاص طور پر لکھا گیا ہے جس نے 1939ءمیں محض 28 دن کے دوران 7 ہزار سے زائد لوگوں کی ڈیتھ پینلٹی کو عملی جامہ پہنایا۔ اس وقت کے روسی ڈکٹیٹر سٹالن نے 1939ءمیں پولینڈ کے قیدی

بنائے گئے 20 ہزار سے زائد فوجیوں کو زندگی سے محروم کرنے کا حکم دیا تو بلوفن اس سزا کو سرانجام دینے والوں میں سر فہرست تھا۔ ان فوجیوں کو یہ سزا دینے کیلئے بنائے گئے ایک خصوصی کمرے میں لایا جاتا جہاں ان کی جان لے لی جاتی تھی ۔ وہ ہر رات تقریباً 300 قیدیوں کو اپنے ہاتھ سے ختم کرتا ۔ یہ ہتھیار جرمن فوجی استعمال کرتے تھے اور اسے استعمال کرنے کا مقصد یہ تھا کہ اگر کبھی ان بدقسمت قیدیوں کے اجسام دریافت ہوں تو الزام جرمن فوج پر لگایا جا سکے اور پھر یہی ہوا کہ جب 1943ءمیں پولینڈ کے فوجیوں کی اجتماعی خبروں کا انکشاف ہوا تو روس نے جرمنی پر الزام لگا دیا۔ بالآخر 1990ءمیں میخائل گور با چوف کے دور میں اصل حقائق دنیا کے سامنے آگئے، سٹالن نے بلوفن کو خفیہ طور پر روس کے اعلیٰ فوجی اعزاز آرڈرآف دی ریڈ بینر سے بھی نوازا تھا، بلوفن نے اس کے بعد کئی سال مجنوﺅں کی طرح زندگی گزاری اور بالآخر اس کا دماغ الٹ گیا اور الٹی سیدھی حرکتیں کیا کرتا ، 1995ءمیں اس نے خود موت کو گلے لگا لیا ۔


Top