عشق مجازی اور عشق حقیقی میں کیا فرق ہے؟ حضرت امام جعفر صادق رضی اللہ تعالی عنہہ کی زندگی کے اقتباس سے ایک شاندار روداد

عشق کیوں ہوتا ھے ؟؟ایک بار حضرت امام جعفر صادق رضی اللہ تعالی عنہہ سے کسی نے پوچھا عشق کیوں ہوتا ھے؟کسی انسان کو کوئی انسان اتنا اچھا کیوں لگتا ھے کہ اسکے سامنے ساری کائنات کچھ نہیں لگتی؟امام جعفر صادق رضی اللہ تعالی عنہہ نے جواب دیا میں نے اپنے

بابا سے اور انہوں نے اپنے بابا سے اور انہوں نے اپنے بابا سے اور انہوں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے یہ کہتے سنا ہر انسان کے اندر اللہ کی کوئی نہ کوئی صفت ضرور موجود ہوتی ھےکوئی رحم دل ہوتا ھے کوئی سخی ہوتا ھے تو کوئ عادل ہوتا ھے کوئی شجاع ہوتا ھےانسان اپنے اندر پائے جانے والے اوصاف کی خوشبو کسی دوسرے میں محسوس کرتا ھے تو اسکی طرف مائل ہونا شروع ہوجاتا ھے اور اس سے بات کرنا اسے دیکھنا اور اس سے ملنا اسے اچھا لگتا ھے اسے یہ لگتا ھے یہ میرا اور میں اسکا ہوں دراصل وہ خود کو اس میں اور اپنے آپ میں اسکو دیکھتا ھے۔اور ہر جگہ اسکی کمی کو محسوس کرتا ھے اور وہ چاہتا ھے کہ وہ ہر پل مجھ سے راضی رھے اسی کیفیت کو زمانے والے عشق کہتے ہیں۔۔۔واضح رہے یونیورسٹی کے ایک دوست نے بتایا کہ ان کے کزن سے ایک غلطی سرزد ہوئی ہے لڑکی سے زنا کے ارتکاب کے بعدوہ لڑکی Pregnant ہے وہ چاہتے ہیں میں abortion کرانے میں اور جیسے کہ اُ نہوں نے کہا لڑکی کی زندگی بچانے میں انکی مددکروں مجھے یاد آیا کچھ عرصہ پہلے گونگی چیخ کا زکر زبان زد عام تھا اور میں اپنے دوست کے ساتھ ساتھ باقی لوگو کو بھی اس واقعے سے آگاہ کرنا چاہوں گا ۔۔۔ﺍﻣﺮﯾﮑﮧ ﻣﯿﮟ ﺳﻦ 1984 ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﮐﺎﻧﻔﺮﻧﺲ ﮨﻮﺋﯽ ﺗﮭﯽ ‘ – ﻧﯿﺸﻨﻞ ﺭﺍﺋﭩﺲ ﭨﻮ ﻻﻳﭙﮫ ﻛﻨﻮﯾﻨﺸﻦ .‘ ﺍﺱ ﮐﺎﻧﻔﺮﻧﺲ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﻧﻤﺎﺋﻨﺪﮮ ﻧﮯ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﺑﺮﻧﺎﺭﮈ ﻧﮯﺗﮭﯿﻨﺴﻦ

ﮐﮯ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﺍﺳﻘﺎﻁ ﺣﻤﻞ ﮐﯽ ﺑﻨﺎﺋﯽ ﮔﺌﯽ ﺍﯾﮏ ﺍﻟﭩﺮﺍﺳﺎﮈ ﻓﻠﻢ ‘ﺳﺎﻟﭧ ﺳﻜﺮﻳﻢ )‘ﮔﻮﻧﮕﯽ ﭼﯿﺦ ( ﮐﺎ ﺟﻮ ﺗﻔﺼﯿﻼﺕ ﺩﯾﺎ ﺗﮭﺎ،ﻭﮦ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﮨﮯ‘ -ﺑﭽﮧ ﺩﺍﻧﯽ ﮐﯽ ﻭﮦ ﻣﻌﺼﻮﻡ ﺑﭽﯽ ﺍﺏ 15 ﮨﻔﺘﮯ ﮐﯽ ﺗﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﮐﺎﻓﯽ ﭼﺴﺖ ﺗﮭﯽ . ﮨﻢ ﺍﺳﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﺎﮞ ﮐﯽ ﭘﯿﭧ ﻣﯿﮟ ﮐﮭﯿﻠﺘﮯ، ﮐﺮﻭﭦ ﺑﺪﻟﺘﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﮕﻮﭨﮭﺎ ﭼﻮﺳﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺩﯾﮑﮫ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ. ﺍﺱ ﮐﮯ ﺩﻝ ﮐﯽ ﺩﮬﮍﻛﻨﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﮨﻢ ﺩﯾﮑﮫ ﭘﺎ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ 120 ﮐﯽ ﺭﻓﺘﺎﺭ ﺳﮯ ﺩﮬﮍﮎ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ.ﺳﺐ ﮐﭽﮫ ﺑﺎﻟﮑﻞ ﻧﺎﺭﻣﻞ ﺗﮭﺎ؛ ﻟﯿﮑﻦ ﺟﯿﺴﮯ ﮨﯽ ﭘﮩﻠﮯ ﺍﻭﺯﺍﺭ )ﺳﻜﺴﻦ ﭘﻤﭗ( ﻧﮯ ﺑﭽﮧ ﺩﺍﻧﯽ ﮐﯽ ﺩﯾﻮﺍﺭ ﮐﻮ ﭼﮭﻮ ﻟﯿﺎ، ﻭﮦ ﻣﻌﺼﻮﻡ ﺑﭽﯽ ﮈﺭ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﺩﻡ ﮔﮭﻮﻡ ﮐﺮ ﺳﮑﮍ ﮔﺌﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺩﻝ ﮐﯽ ﺩﮬﮍﮐﻦ ﺑﮩﺖ ﺑﮍﮪ ﮔﺌﯽ . ﺍﮔﺮﭼﮧ ﺍﺑﮭﯽ ﺗﮏ ﮐﺴﯽ ﺍﻭﺯﺍﺭ ﻧﮯ ﺑﭽﯽ ﮐﻮ ﭼﮭﻮﺍ ﺗﮏ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﺎ، ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺳﮯ ﺗﺠﺮﺑﮧ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﭼﯿﺰ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺍﺭﺍﻣﮕﺎﻩ، ﺍﺱ ﻣﺤﻔﻮﻅ ﻋﻼﻗﮯ ﭘﺮ ﺣﻤﻠﮧ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﺮ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ.ﮨﻢ ﺩﮨﺸﺖ ﺳﮯ ﺑﮭﺮﮮ ﯾﮧ ﺩﯾﮑﮫ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ ﮐﮧ ﮐﺲ ﻃﺮﺡ ﻭﮦ ﺍﻭﺯﺍﺭ ﺍﺱ ﻧﻨﮭﯽ- ﻣﻨﯽ ﻣﻌﺼﻮﻡ ﮔﮍﻳﺎ- ﺳﯽ ﺑﭽﯽ ﮐﮯ ﭨﮑﮍﮮ ﭨﮑﮍﮮ ﮐﺮ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ . ﭘﮩﻠﮯ ﮐﻤﺮ، ﭘﮭﺮ ﭘﯿﺮ ﻭﻏﯿﺮﮦ ﮐﮯ ﭨﮑﮍﮮ ﺍﯾﺴﮯ ﮐﺎﭨﮯ ﺟﺎ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ ﺟﯿﺴﮯ ﻭﮦ ﺯﻧﺪﮦ ﻣﺨﻠﻮﻕ ﻧﮧ ﮨﻮﮐﺮ ﮐﻮﺋﯽ ﮔﺎﺟﺮ- ﻣﻮﻟﯽ ھو اﻭﺭ ﻭﮦ ﺑﭽﯽ ﺩﺭﺩ ﺳﮯ ﭼﮭﭩﭙﭩﺎﺗﯽ ﮨﻮﺋﯽ، ﺳﮑﮍ ﮐﺮ ﮔﮭﻮﻡ ﮔﮭﻮﻡ ﮐﺮ ﺗﮍﭘﺘﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﺍﺱ ﻗﺎﺗﻞ ﺍﻭﺯﺍﺭ ﺳﮯ ﺑﭽﻨﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﺮ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ. ﻭﮦ ﺍﺱ ﺑﺮﯼ ﻃﺮﺡ ﮈﺭ ﮔﺌﯽ ﺗﮭﯽﮐﮧ ﺍﯾﮏ ﻭﻗﺖ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺩﻝ ﮐﯽ ﺩﮬﮍﮐﻦ 200 ﺗﮏ ﭘﮩﻨﭻ ﮔﺌﯽ! ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺧﻮﺩ ﺍﭘﻨﯽ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﺳﮯ ﺍﺱ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﺎ ﺳﺮ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﺟﮭﭩﻜﺘﮯ ﻭ ﻣﻨﮧ ﮐﮭﻮﻝ ﮐﺮ ﭼﻴﻜﮭﻨﮯ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ،ﺟﺴﮯ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﻧﮯﺗﮭﯿﻨﺴﻦ میں ‘ﮔﻮﻧﮕﯽ ﭼﯿﺦ’ ﯾﺎ ‘ﺧﺎﻣﻮﺵ ﭘﮑﺎﺭ’ ﮐﮩﺎ ﮨﮯ.ﺁﺧﺮ ﻣﯿﮟ ﮨﻢ ﻧﮯ ﻭﮦ ﻧﺮﺷﺲ ﻭﻳﺒﮭﺘﺲ ﻣﻨﻈﺮ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﮑﮭﺎ، ﺟﺐ ﺳﮉﺳﯽ ﺍﺱ ﮐﮭﻮﭘﮍﯼ ﮐﻮ ﺗﻮﮌﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺗﻼﺵ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﺩﺑﺎﻧﮯ ﺳﮯ ﺍﺱ ﺳﺨﺖ ﮐﮭﻮﭘﮍﯼ ﮐﻮ ﺗﻮﮌ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺳﺮ ﮐﺎ ﻭﮦ ﺣﺼﮧ ﺑﻐﯿﺮ ﺗﻮﮌﮮ ﺳﮑﺸﻦ ﭨﯿﻮﺏ ﮐﮯ ﺫﺭﯾﻌﮯ ﺑﺎﮨﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﻧﮑﺎﻻ ﺟﺎ ﺳﮑﺘﺎ ﺗﮭﺎ‘ .ﻗﺘﻞ ﮐﮯ ﺍﺱ ﺍﺩﺑﮭﺖ ﮐﮭﯿﻞ ﮐﻮ ﺧﻮﺷﺤﺎﻝ ﮐﺮﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﻗﺮﯾﺐ ﭘﻨﺪﺭﮦ ﻣﻨﭧ ﮐﺎ ﻭﻗﺖ ﻟﮕﺎﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﺩﺭﺩﻧﺎﮎ ﻣﻨﻈﺮ ﮐﺎ ﺍﻧﺪﺍﺯﮦ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺍﻭﺭ ﮐﺲ ﻃﺮﺡ ﻟﮕﺎﯾﺎ ﺟﺎ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺟﺲ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﻧﮯ ﯾﮧ ﺍﺳﻘﺎﻁ ﺣﻤﻞ ﮐﯿﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺟﺲ ﻧﮯ ﻣﺤﺾ شوقیہ ﺍﺱ ﻓﻠﻢ ﺑﻨﻮﺍ ﻟﯽ ﺗﮭﯽ، ﺍﺱ ﻧﮯ ﺟﺐ ﺧﻮﺩ ﺍﺱ ﻓﻠﻢ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﺎ ﮐﻠﯿﻨﮏ ﭼﮭﻮﮌ ﮐﺮ ﭼﻼ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﻭﺍﭘﺲ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﯾﺎ