You are here
Home > اسپشیل اسٹوریز > تاریخی وا قعات > امیر تیمور کے دربار میں ایک عالم نے دلیل کے بغیر بات کی تو ۔۔۔۔ پڑھیے ایسی داستان جو آج کے علماء کے لیے سبق اموز ہو گی

امیر تیمور کے دربار میں ایک عالم نے دلیل کے بغیر بات کی تو ۔۔۔۔ پڑھیے ایسی داستان جو آج کے علماء کے لیے سبق اموز ہو گی

امیر تیمور کی یہ عادت تھی کہ وہ جب کسی شہر کو فتح کرتا تو وہاں کے علماءکو اپنے دربار میں بلا کر کچھ خاص قسم کے سوالات کرتا۔ کیونکہ وہ عالموں کی بہت عزت کرتا تھا۔ اگر وہ کسی عالم سے سوال کرتا اور وہ ادھر ادھر کی مارتا یعنی کسی دلیل کے بغیر بات کرتا تو امیر تیمور اس کو قتل کروا دیتا تھا۔چنانچہ جب اس نے حلب کو فتح کیا تو شہر میں قتل عام کرایا اور ہزاروں لوگوں کو گرفتار کر لیا۔

پھر علماءشہر کو قلعہ میں بلا کر اپنے سامنے بٹھایا اور اپنے درباری مولوی عبدالجبار بن علامہ نعمان الدین حنفی سے مخاطب ہو کر کہا کہ آپ ان علماءسے کہہ دیجئیے کہ میں ان سے ایک ایساسوال پوچھوں گا جو میں نےسمر قندی اور میرات کے عالموں سے بھی دریافت کیا مگر ان لوگوں نے اس کا شافی جواب نہیں دیا۔ لہٰذا ان علماءکی طرح یہ لوگ بھی میرے سوال کا گول مول جواب نہ دیں بلکہ صاف صاف وضاحت کے ساتھ جواب دیں اور ان علماءمیں جو سب سے زیادہ صاحب علم ہو وہی جواب دے۔ چنانچہ درباری عالم عبدالجبار نے کہا کہ ہمارے سلطان آپ لوگوں سے یہ سوال کرتے ہیں کہ کل جنگ میں ہمارے اور تمھارے آدمی بکثرت قتل ہوئے تو آپ لوگ یہ بتائیں کہ ہماری فوج کے مقتولین شہید ہوئے یا تمھاری فوج کے؟یہ سوال سن کر تمام علماءگھبرا گئے۔مگر علامہ ابن طمنہ جواب دینے کے لیے کھڑے ہوگئے۔ اور فرمایا کہ مجھے اس وقت ایک حدیث یاد آگئی ہے۔ ایک اعرابی حضور اکرمﷺ کی خدمت میں آیا اور عرض کیا کہ یارسول اللہ ایک شخص مال غنیمت کے لالچ میں جنگ کرتا ہے اور ایک شخص لڑتے ہوئے اور ناموری کے لئے قتال کرتا ہے اور ایک شخص خدا کی راہ میں کلمتہ اللہ کی بلندی کے لیے لڑتا ہے تو ان میں سے شہید کون ہے۔تو حضوراکرمﷺ نے ارشاد فرمایا کہ جس نے خدا کی راہ میں اعلاءکلمتہ اللہ کے لیے جنگ کی وہی شہید ہے۔ لہٰذا اے بادشاہ ہماری فوج کے مقتولین ہوں یا آپ کی فوج کے۔ جنھوں نے خدا کی راہ میں کلمہ حق کی بلندی کی نیت سے جنگ کی ہو گی وہ شہید ہوں گے اور جو مال غنیمت یا نامواری کے لیے لڑتے ہوئے مارے گئے ہوں کے وہ شہید نہیں ہوں گے علامہ کا یہ مسکت اور شافی جواب سن کر امیر تیمور حیران رہ گیا اور بے اختیار تیمور کی زبان سے خوب!خوب! نکلا۔ پھر اُس نے تمام علما کو عزت سے جانے دیا۔


Top