You are here
Home > اسپشیل اسٹوریز > اسلامی واقعات > دومسافروں کی تین روٹیوں کا قصہ ،پڑھیے حضرت علی رضی اللہ عنہ کے ایسے تاریخی فیصلے کاواقعہ جو آپ کی حیرت گم کر دے گا

دومسافروں کی تین روٹیوں کا قصہ ،پڑھیے حضرت علی رضی اللہ عنہ کے ایسے تاریخی فیصلے کاواقعہ جو آپ کی حیرت گم کر دے گا

حضرت علی رضی اللہ تعالی عنہ سے بڑھ کے اسلامی تاریخ میں عمدہ فیصلے کوئی نہیں کر سکا ۔یہاں تک کہ حضرت عمر رضی اللہ عنہ بھی ان سے اپنے دور میں اہم فیصلوں پر مشاورت کرتے تھے ۔ﺍﯾﮏ ﻣﺮﺗﺒﮧ ﺩﻭ ﺍﻓﺮﺍﺩ ﺳﻔﺮ ﭘﺮ ﺗﮭﮯ، ﺍﯾﮏ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺗﯿﻦ ﺭﻭﭨﯿﺎﮞ ﺗﮭﯿﮟ . ﺍﻭﺭ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﭘﺎﻧﭻ ، ﺩﻭﻧﻮﮞ ﻣﻠﮑﺮ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﺑﯿﭩﮭﮯ ﮨﯽ ﺗﮭﮯ ﮐﮧ ﺍﺗﻨﮯﻣﯿﮟ

ﺍﯾﮏ ﺗﯿﺴﺮﺍ ﻣﺴﺎﻓﺮ ﺑﮭﯽ ﺁﮔﯿﺎ ﻭﮦ ﺑﮭﯽ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﺷﺮﯾﮏ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﺳﮯ ﻓﺮﺍﻏﺖ ﮨﻮﺉ ﺗﻮﺍﺱ ﻧﮯ ﺁﭨﮫ ﺩﺭﮨﻢ ﺍﭘﻨﮯ ﺣﺼﮧ ﮐﯽ ﺭﻭﭨﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﻗﯿﻤﺖ ﺩﮮ ﺩﯼ ﺍﻭﺭ ﺁﮔﮯ ﺑﮍﮪ ﮔﯿﺎ ۔ ﺟﺲ ﺷﺨﺺ ﮐﯽ ﭘﺎﻧﭻ ﺭﻭﭨﯿﺎﮞ ﺗﮭﯿﮟ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺳﯿﺪﮬﺎ ﺣﺴﺎﺏ ﯾﮧ ﮐﯿﺎ ﮐﮧ ﺍﭘﻨﯽ ﭘﺎﻧﭻ ﺭﻭﭨﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﻗﯿﻤﺖ ﭘﺎﻧﭻ ﺩﺭﮨﻢ ﻟﯽ ﺍﻭﺭ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮐﻮ ﺗﯿﻦ ﺭﻭﭨﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﻗﯿﻤﺖ ﺗﯿﻦ ﺩﺭﮨﻢ ﺩﯾﻨﮯ ﭼﺎﮨﮯ ۔ﻣﮕﺮ ﻭﮦ ﺍﺱ ﭘﺮ ﺭﺍﺿﯽ ﻧﮧ ﮨﻮﺍﻋﻨﮧ ﮐﯽ ﺧﺪﻣﺖ ﻣﯿﮟ ﭘﯿﺶ ﻫﻮﺍ ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻠﯽ ﺭﺿﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻨﮧ ﻧﮯ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮐﻮ ﻧﺼﯿﺤﺖ ﻓﺮﻣﺎﺉ ﮐﮧ ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﺭﻓﯿﻖ ﺟﻮ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﮐﺮ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ ﺍﺳﮑﻮ ﻗﺒﻮﻝ ﮐﺮ ﻟﻮ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮭﺎﺭﺍ ﻧﻔﻊ ﮨﮯ ، ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺱ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﺣﻖ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﺣﻖ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺟﻮ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﮨﻮ ﻣﺠﮭﮯ ﻣﻨﻈﻮﺭ ﮨﻮﮔﺎ ۔ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻠﯽ ﺭﺿﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻨﮧ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﺣﻖ ﺗﻮ ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺗﻢ ﮐﻮ ﺻﺮﻑ ﺍﯾﮏ ﺩﺭﮨﻢ ﺍﻭﺭ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﺳﺎﺗﮭﯽ ﮐﻮ ﺳﺎﺕ ﺩﺭﮨﻢ ﻣﻠﻨﮯ ﭼﺎﮨﺌﯿﮟ ، ﺍﺱ ﻋﺠﯿﺐ ﻓﯿﺼﻠﮯ ﺳﮯ ﻭﮦ ﻣﺘﺤﯿﺮ ﮨﻮﮔﯿﺎ۔ ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻠﯽ ﺭﺿﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻨﮧ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﮐﮧ ﺗﻢ ﺗﯿﻦ ﺁﺩﻣﯽ ﺗﮭﮯ ، ﺗﻤﮭﺎﺭﯼ ﺗﯿﻦ ﺭﻭﭨﯿﺎﮞ ﺗﮭﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﺭﻓﯿﻖ ﮐﯽ ﭘﺎﻧﭻ ، ﺗﻢ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﻧﮯ ﺑﺮﺍﺑﺮ ﮐﮭﺎﺋﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﮏ ﺗﯿﺴﺮﮮ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﺑﺮﺍﺑﺮ ﮐﺎﺣﺼﮧ ﺩﯾﺎ ، ﺗﻤﮩﺎﺭﯼ ﺗﯿﻦ ﺭﻭﭨﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﺣﺼﮯ ﺗﯿﻦ ﺟﮕﮧ ﮐﺌﮯﺟﺎﺋﯿﮟ ﺗﻮ 9 ﭨﮑﮍﮮ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ۔ ﺗﻢ ﺍﭘﻨﮯ ﻧﻮ ﭨﮑﮍﻭﮞ ﮐﻮ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﮯ 15 ﭨﮑﮍﻭﮞ ﮐﻮ ﺟﻤﻊ ﮐﺮﻭ ﺗﻮ24 ﭨﮑﮍﮮ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺗﯿﻨﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﮨﺮ ﺍﯾﮏ ﻧﮯ ﺑﺮﺍﺑﺮ ﭨﮑﮍﮮ ﮐﮭﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﻓﯽ ﮐﺲ 8 ﭨﮑﮍﮮ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ۔ﺗﻢ ﻧﮯ 9 ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺁﭨﮫ ﺧﻮﺩ ﮐﮭﺎﺋﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﮏ ﺗﯿﺴﺮﮮ ﻣﺴﺎﻓﺮ ﮐﻮ ﺩﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﺗﻤﮭﺎﺭﮮ ﺭﻓﯿﻖ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ 15 ﭨﮑﮍﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ 8 ﺧﻮﺩ ﮐﮭﺎﺋﮯ ﺍﻭﺭ 7 ﺗﯿﺴﺮﮮ ﮐﻮ ﺩﺋﯿﮯ ۔ ﺍﺱ ﻟﺌﯿﮯ 8 ﺩﺭﮨﻢ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﮐﮯ ﺗﻢ ﺍﻭﺭ 7 ﮐﺎ ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﺭﻓﯿﻖ ﻣﺴﺘﺤﻖ ﮨﮯ ﯾﮧ ﺗﻔﺼﯿﻞ ﺳﻨﻨﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﺱ ﺟﮭﮕﮍﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺷﺨﺺ ﻧﮯ ﺁﭖ ﮐﮯ ﻓﯿﺼﻠﮯ ﮐﻮ ﻗﺒﻮﻝ ﮐﺮﻟﯿﺎ۔سبحان اللہ کیا کمال فیصلہ کیا تھا یہ تھے علم کے شہر اور اسلامی روایات کے وارث کی داساﮟن


Top