ترکی میں نوبیاہتا دلہن کے لباس کے ساتھ بیلٹ کیوں باندھی جاتی ہے؟ ترک رسوم و رواج پر مبنی ایک اور حیران کُن رپورٹ

انقرہ (ویب ڈیسک) جب سے ترک ڈرامہ سیریل ارطغرل پاکستان میں دکھایا جانے لگا ہے تب سے ہی پاکستانیوں کو ترک ثقافت و روایات کے بارے میں جاننے کا شوق پروان چڑھنے لگا ہے . اس ڈرامے میں حلیمہ سلطان کی شادی کے موقع پر بیلٹ باندھنے کا ایک سین دکھایا گیا تھا .

دراصل ترک روایت میں دلہن کے لباس کے ساتھ اس کے گھر والے ایک لال رنگ کا بیلٹ کمر کے گرد باندھتے ہیں . اس کے علاوہ ترک شادیوں کی کیا روایات ہیں آئیں اس مضمون میں ہم آپ کو بتاتے ہیں .جس طرح پاکستان میں شادیوں میں لوگوں کی بڑی تعداد شریک ہوتی ہے ، بالکل اسی طرح ترک شادیوں میں بھی لوگ اکھٹے ہوتے ہیں . ان دنوں کورونا کی وجہ سے شاید تعداد میں کمی ہو، تاہم عام دنوں میں وہاں کی شادیوں میں لوگ بڑی تعداد میں موجود ہوتے ہیں . وہ ترک افراد گاؤں میں رہتے ہیں ، وہ تین دن تک شادی کا جشن مناتے ہیں ، جبکہ شہروں میں رہنے والے لوگ ایک دن شادی کا جشن مناکر اگلے دن گھومنے کیلئے نکل جاتے ہیں . ترک شادی کی روایات : ترک شادیوں کی چند روایات مندرجہ ذیل ہیں. ”بکلاوہ“ کھانا اور بانٹنا : شادی کی تقریب سے قبل دلہا اور دلہن کے گھر والے ایک تقریب منعقد کرتے ہیں ، جس میں دونوں خاندان آپس میں ملتے ہیں . اس تقریب کے دوران ترک روایتی مٹھائی ”بکلاوہ“ ایک دوسرے کو کھلاتے ہیں . یہ بکلاوہ شادی کی خوشی میں پڑوسیوں اور رشتہ داروں میں تقسیم بھی کیا جاتا ہے . جس سے ان لوگوں کو اس شادی کی خبر کے بارے میں پتا چلتا ہے. کینا نائٹ: کینا نائٹ کا انعقاد شادی سے سے ایک یا دو ہفتے قبل کیا جاتا ہے . یہ شادی سے قبل ہونے والے جشن کی ایک تقریب ہوتی ہے.

اس میں پہلے دلہن کو لال رنگ کا ایک لباس پہننا ہوتا ہے . اسے وہ کچھ دیر کے بعد بدل کر روایتی لباس ”بندالی“ پہن لیتی ہے. اس لباس کو رات گئے جاری رہنے والی اس تقریب میں اسے پہنے رہنا ہوتا ہے. اس تقریب میں دلہا اپنے دوستوں کے ساتھ شرکت کرتا ہے. اس میں دلہن، یا پھر دلہا دلہن دونوں ایک ساتھ تقریب کے پنڈال میں داخل ہوتے ہیں. ایسے وقت میں دلہن کے ساتھ موجود خواتین ہاتھوں میں موم بتی یا چراغ تھامے ہوئے ہوتی ہیں .دلہا دلہن کو تین مرتبہ ایک گول دائرے میں ایک ساتھ گھومنا ہوتا ہے اور اس کے بعد وہ بیٹھ جاتے ہیں اور ان کی ایک طرح کی مہندی کی رسم کی جاتی ہے . دلہا دلہن اپنی مٹھی کو اس وقت تک بند رکھتے ہیں جب تک انہیں سسرال والوں کی جانب سے سونے کا بریسلیٹ نہ پہنایا جائے یا مہندی کے اوپر سونے کا سکہ نہ رکھا جائے ، اس کے بعد دلہن کی مہندی کی رسم ادا کی جاتی ہے . سرخ بیلٹ: ترک دلہن کو سفید لباس پہننا ہوتا ہے لیکن اس لباس کے ساتھ اسے سرخ رنگ کا بیلٹ باندھا جاتا ہے . یہ بیلٹ کنواری دلہن کی نشاندہی کرتا ہے . بیلٹ دلہن کے مرد رشتہ دار جیسے والد یا بھائی باندھتے ہیں ،

اگر یہ رشتے نہ ہوں تو والدہ یا بہن باندھتی ہیں . اس بیلٹ کو اب کچھ خواتین نہیں باندھنا چاہتیں . یہی وجہ ہے کہ اس سرخ روایتی بیلٹ جو کہ کنوارے ہونے کی دلیل ہوتا ہے ، اب ترک خواتین اس روایت کو ختم کرنے کی کوششوں میں ہیں . گردن کے گرد ربن باندھنا : جیسے ہی قانونی و روایتی کیک کاٹنے کی رسم پوری ہوجاتی ہے . دلہا دلہن کے گردن کے گرد لال رنگ کی ربن ڈال دی جاتی ہے. اس ربن کے اوپر شادی میں شریک مہمان پیسے، سونے کا سکہ وغیرہ ٹانک دیتے ہیں. ان چیزوں کو مہمان کی جانب سے دلہا لہن کیلئے تحفہ سمجھا جاتا ہے . رخصتی، گاڑیوں کا قافلہ اور بچوں کا روکنا : شادی کی تقریب کے اختتام پر دلہا دلہن کا قافلہ گاڑیوں کی صورت میں نکلتا ہے اور شہر یا علاقے کی سڑکوں پر ہارن بجاتا ہے. سڑک پر موجود بچے دلہا دلہن کی گاڑی کے گرد جمع ہوجاتے ہیں، وہ گاڑی روکتے ہیں اورپھر ان بچوں کو پیسے دئیے جاتے ہیں .یہ کچھ روایات ہیں جو ترک کلچر کا حصہ ہیں ، وہاں بھی مختلف علاقوں اور شہروں کے حساب سے کچھ روایات تبدیل بھی ہوتی ہیں ، لیکن شادیوں کی رسومات و روایات کسی بھی کلچر کو دنیا بھر میں متعارف کروانے کا سبب بھی بنتی ہیں . یہی وجہ ہے کہ لوگ دوسرے ممالک کے بارے میں جاننے میں دلچسپی لیتے دکھائی دیتے ہیں .