جاپان کی مشہور بلی مر گئی، آخری رسومات میں ہزاروں افراد کی شرکت

غیر ملکی خبر رساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق مغربی جاپان میں بلی ٹاما کیلئے شاہانہ آخری رسومات کا اہتمام کیا گیا جس میں 3 ہزار لے لگ بھگ افراد نے شرکت کی۔ اس موقع پر ہر شخص انتہائی افسردہ نظر آیا۔ ٹاما کے مداحوں کی جانب سے بڑی تعداد میں پھولوں کے گلدستے رکھے گئے ہیں۔ بعد ازاں ایک خصوصی تقریب میں ٹاما کو مرنے کے بعد

دیوی کے درجے پر فائز کر دیا گیا ہے۔خیال رہے کہ ٹاما نامی اس بلی کو آٹھ سال قبل سرکاری طور پر سٹیشن ماسٹر بنایا گیا تھا جس کے بعد یہ بلی دنیا بھر کے ذرائع ابلاغ میں سرخیوں کی زینت بن گئی تھی۔ اسے دیکھنے کے لئے ہر سال ہزاروں سیاح آتے تھے جس کی وجہ سے ریلوے کمپنی کی مالی حیثیت مستحکم ہوئی تھی۔ اس بلی کو خصوصی طور پر بنائے جانے والی ٹوپی اور کوٹ پہنے کیشی سٹیشن پر اکثر گھومتے پھرتے دیکھا جا سکتا تھا۔ ٹاما نے دنیا بھر سے سیاحوں کو اپنی طرف متوجہ کرکے ریلوے کو درپیش مالی مشکلات کے حل میں اہم کردار ادا کیا۔ ایک اندازے کے مطابق ٹاما کی وجہ سے مقامی معیشت کو تقریبا 80 لاکھ ڈالرز کا فائدہ پہنچا ہے۔واضح رہے کہ جاپان میں بڑی تعداد میں شنتو مذہب کے پیروکار ہیں اور اس مذہب میں جانوروں سمیت کئی خدا ہیں۔ بلی کے جنازے میں ریلوے کمپنی کے درجنوں اہلکاروں کے علاوہ ہزاروں مداحوں نے بھی شرکت کی۔ ٹاما کی وفات کے بعد نتیما نامی ایک اور بلی کو تربیتی بنیادوں پر سٹیشن ماسٹر تعینات کر دیا گیا ہے۔مزید پڑھئیے :: ہمارے ہاں بدقسمتی سے امتحانات میں نقل کا رجحان عام پایا جاتا ہے اور اس جرم کی سنگینی کو اہمیت نہیں دی جاتی لیکن چین میں اس جرم کو اس قدر سنگین قرار دے دیا گیا ہے کہ اس کے مرتکب ہونے والوں کا نہ صرف پرچہ منسوخ کیا جائے گا بلکہ انہیں قید کی سزا بھی دی جائے گی۔چینی میڈیا کے مطابق نیشنل پیپلزکانگرس کی قائمہ کمیٹی نیا قانون تیار کررہی ہے جس کے تحت یونیورسٹی داخلہ ودیگر امتحانات میں بددیانتی اور نقل کے مرتکب ہونے والوں کو جیل بھیجا جائے گا۔ یہ اہم فیصلہ چین کے مشہورقومی سطح کے امتحان گا کا میں نقل اور غیر قانونی ذرائع کے استعمال کے انکشافات کے بعد کیا گیا۔ یہ امتحان چین کی سرکاری یونیورسٹیوں میں داخلے کیلئے منعقد کیاجاتا ہے اور اس میں کروڑوں طلباشرکت کرتے ہیں۔ حال ہی میں منعقد ہونے والے گا کا امتحان میں بے قاعدگیوں کی خبریں سامنے آئی تھیں جس کے بعد محکمہ تعلیم کے حکام نے ضوابط کی خلاف ورزی کے مرتکب ہونے والے طلباکیلئے سخت ترین سزائیں وضع کرنے کا فیصلہ کیا۔ امتحانات میں نقل اور دیگر غیر قانونی ذرائع کا جرم ثابت ہونے پر بھاری جرمانہ بھی کیا جاسکے گا جبکہ قید کی سزا تین سے سات سال تک ہوگی۔