میشا شفیع کو بڑا دھچکا۔۔۔عدالت نے ایسا فیصلہ سنا دیا کہ گلوکارہ اپنے آنسو نہ روک سکی

لاہور(ویب ڈیسک) عدالت نے گلوکارہ میشا شفیع کی درخواست پر اہم فیصلہ سنا دیا۔عدالت نے میشا شفیع کی ہتک عزت کے دعوے پر کارروائی روکنے کی درخواست مسترد کردی۔لاہور کی سیشن عدالت کے جج یاسرعلی نے میشا شفیع کی درخواست پر سماعت کی۔ ایڈیشنل سیشن جج نے میشا شفیع کی ہتک عزت کے دعوے

پر کارروائی روکنے کی درخواست مسترد کرتے ہوئے میشا شفیع کے گواہوں کو 27 اکتوبر کو طلب کر لیا۔یاد رہے کہ گلوکارہ میشا شفیع نے گزشتہ سماعت پر سائبر کرائم کی ایف آئی آر کا فیصلہ ہونے تک دعوے پر کارروائی روکنے کی استدعا کی تھی۔ میشا شفیع کا موقف تھا مقدمہ درج ہونے سے گواہ خوف کا شکار ہیں، لہذا ایف آئی اے کی جانب سے دائر مقدمے کا فیصلہ ہونے تک علی ظفر کی جانب سے دائر ہتک عزت کے دعوے پر کارروائی روکی جائے۔دوسری جانب علی ظفر نے عدالت سے استدعا کرتے ہوئے کہا تھا میشا شفیع تاخیری حربے استعمال کررہی ہیں، ان کے صرف پانچ گواہ مقدمے میں نامزد ہیں، لہذا عدالت میشا شفیع کی درخواست مسترد کرتے ہوئے ہتک عزت کے دعوے پر کارروائی مکمل کرے۔واضح رہے کہ گلوکار علی ظفر نے جنسی ہراسانی کے الزامات لگانے پر میشا شفیع کے خلاف ایک ارب ہرجانے کا دعویٰ دائر کررکھا ہے۔ میشا شفیع نے 10 اکتوبر کو لاہور کی سیشن کورٹ میں اپنے خلاف چلنے والے ہتک عزت کے مقدمے کی کارروائی کو فی الحال روکنے یا ملتوی کرنے کی درخواست دائر کی تھی۔میشا شفیع کے وکیل ثاقب جیلانی نے عدالت میں گلوکارہ کی جانب سے درخواست دائر کی جس پر سماعت کے بعد سیشن کورٹ نے 13 اکتوبر کو علی ظفر کو طلب کیا تھا-درخواست میں کہا گیا تھا کہ وفاقی تحقیقاتی ادارے (ایف آئی اے) نے مجھ سمیت دیگر گواہان کے خلاف مقدمہ درج کرلیا ہے۔شوبز میں آج کل جنسی حراسانی کےمعاملے پر می 2 مہم بھی چلائی جا رہی ہے ۔