تمام گواہوں اور ثبوتوں کو مدِ نظر رکھتے ہوئے عدالت یہ فیصلہ سُناتی ہے کہ ۔۔۔!!! عدالت رابی پیر زادہ کے حوالے سے بڑا حُکم جاری کر دیا

لاہور (نیوز ڈیسک ) گلوکارہ رابی پیرزادہ کو مگر مچھ اور سانپ پالنے کے کیس میں بری کر دیا گیا۔ تفصیلات کے مطابق گذشتہ سال گلوکارہ رابی پیرزادہ کی اڑدھوں، سانپوں اور مگر مچھ کے ساتھ ویڈیوز وائرل ہوئیں تو محکمہ جنگلی حیات نے عدالت میں ان کے خلاف چالان پیش کیا تھا،عدالت نے رابی پیرزادہ کی عدم موجودگی میں ان

کے قابلِ ضمانت وارنٹ گرفتاری جاری کیے تھے.گذشتہ ہفتے ماڈل ٹائون کچہری کے جوڈیشل مجسٹریٹ حارث صدیقی کی عدالت میں معروف گلوکارہ رابی پیرزادہ نے اپنے وکیل کی وساطت سے درخواست بریت دائر کی،گلوکارہ نے درخواست بریت میں موقف اختیار کیا ہے کہ انکا اس مقدمے سے کوئی تعلق نہیں۔محکمہ وائلڈ لائف نے محض ذاتی رنجش کی بنا پر انہیں مقدمے میں ملوث کیا ہے۔ملزمہ رابی پیرزادہ نے عدالت سے مقدمے سے بری کرنے کی استدعا کی ہے جبکہ رابی پیرزادہ کے وکیل نے یہ موقف اختیار کر کے کہ ملزمہ کی زندگی کو خطرہ ہے اور انہیں مسلسل دھمکیاں دی جارہی ہیں۔ جس کے باعث رابی پیرزادہ کو عدالت میں حاضری سے استثنیٰ بھی دیا جائے۔ آج گلوکارہ رابی پیرزادہ کے خلاف غیرقانونی طور پر مگر مچھ اور سانپ پالنے کے کیس کا فیصلہ سنا دیا ہے۔عدالت گلوکارہ رابی پیرزادہ کو مقدمہ میں بری کرنے کا حکم دے دیا۔ گلوکارہ رابی پیرزادہ ماڈل ٹائون کچہری میں جوڈیشل مجسٹریٹ کی عدالت میں پیش ہوئیں اور استدعا کی کہ ان کے وارنٹ گرفتاری منسوخ کئے جائیں، عدالت نے ان کی استدعا منظور کرتے ہوئے وارنٹ گرفتاری منسوخ کردیئے اور متعلقہ ادارے کے ساتھ تعاون کی ہدایت کردی۔ رابی پیرزادہ نے بتایا کہ انہیں جب خبروں میں سے ملزمہ قرار دیئے جانے کا پتہ چلا تو بھارتی میڈیا ساتھ یہ بھی چلا رہا تھا کہ رابی پیرزادہ کو مودی کو ہراساں کرنے پر گرفتاری کا حکم آگیا، یہ سب چیزیں ایک سلسلے میں ہیں، وہ ویڈیو میں نے مودی کیلئے بنائی تھی جس پر کہا گیا کہ کشمیری لڑکی رابی پیرزادہ نے مودی کو دھمکی دی ہے۔خیال رہے کہ محکمہ وائلڈ لائف نے رابی پیرزادہ کے خلاف مگر مچھ رکھنے کا مقدمہ دائر کر رکھا تھا۔