You are here
Home > پا کستا ن > سندھ کے وزیراطلاعات نے پیپلز پارٹی کے ووٹ بینک میں اضافے کا دعویٰ کرتے ہوئےتحریک انصاف پر بجلیاں گرا دیں

سندھ کے وزیراطلاعات نے پیپلز پارٹی کے ووٹ بینک میں اضافے کا دعویٰ کرتے ہوئےتحریک انصاف پر بجلیاں گرا دیں

کراچی(ویب ڈیسک)صوبائی وزیر اطلاعات و بلدیات سندھ سید ناصر حسین شاہ نے کہا ہے کہ حلیم عادل شیخ سمیت کو ئی بھی قانون سے بالاترنہیں، قانون ہاتھ میں لینے والوں کو نتائج بھگتنا ہوں گے،2018 کے انتخابات میں خان صاحب نے عوام کو ماموں بنایا تھا، لوگوں سے جھوٹے وعدے کئے گئے، تبدیلی اور نئے پاکستان کے خواب دکھائے گئے،سانگھڑ، ملیر اور عمر کوٹ کے ضمنی انتخابات کے بعد تھر پارکر میں کے ضمنی الیکشن میں بھی پیپلز پارٹی بھاری اکثریت سے کامیاب ہوگی۔

تفصیلات کے مطابق میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے سید ناصر حسین شاہ کا کہنا تھا کہ  سندھ کی عوام نے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری کی قیادت اور وژن پر مکمل اعتماد کا اظہار کیا ہے،2018 کے عام انتخابات کے مقابلے میں ضمنی انتخابات میں پیپلز پارٹی کے ووٹوں میں اضافہ ہوا ہے، جبکہ تحریک انصاف(پی ٹی آئی) کے ووٹ بینک میں بہت زیادہ کمی ہوئی ہے،نئے پاکستان میں تبدیلی سرکار نے لوگوں کا جینا اجیرن کیا ہوا ہے،عام آدمی ایک وقت کی روٹی نہیں کھا سکتا،روٹی کا بندوبست کرتا ہے تو دوائی نہیں لے سکتا، بچوں کےسکول کے اخراجات بردا شت نہیں کر سکتا، لوگوں کو روزگار دینے کی بجائے بے روزگار کر دیا گیا ہے، گھر دینے کے بجائے بے گھر کر دیا ہے،اِنہوں نے اپنے گھر تو ریگولرائز کروا دیے لیکن ہزاروں لوگوں کو بے گھر کر دیا ہے۔

صوبائی وزیراطلاعات کا کہنا تھا کہ بلوچستان کے ضمنی انتخاب میں بھی اِن کو شکست ہوئی اور مولانا فضل الرحمان کے امیدوار نے کامیابی حاصل کی، پنجاب میں بھی ضمنی انتخابات میں نتائج سب کے سامنے آجا ئیں گے۔سید ناصر حسین شاہ نے کہا کہ سینیٹ انتخابات میں اوپن ووٹ کی بات کر رہے ہیں اس سے کوئی فرق نہیں پڑے گا،اصل میں ان کو اپنے لوگوں پر اعتماد نہیں ہے ،جن لوگوں کو سینیٹ کے ٹکٹ دیے گئے ان پر تحریک انصاف کے لوگوں کو شدید اعتراضات ہیں کہ یہ پیراشوٹرز کہاں سے آگئے؟زیادہ تر ٹکٹ سرمایہ داروں کو دیے گئے ہیں جن کا پی ٹی آئی سے کوئی تعلق نہیں۔

ملیر واقعہ پر انہوں نے کہا کہ سینکڑوں لوگوں پر مشتمل دند نا تا ہوا قافلہ پولنگ سٹیشن پر خوف و ہراس پھیلانے کی کوشش کرتا رہا ، وہ پولنگ کے عمل کو سست کرنا چاہتے تھے تاکہ پیپلز پارٹی کے امیدوار کو ووٹ کم پڑیں، اس صورتحال پر ڈسٹرکٹ ریٹرننگ آفیسر ملیر نے ضلعی انتظامیہ کو ہدایت دی کہ حلیم عادل شیخ کو حلقہ بدر کیا جائے،اس میں سندھ حکومت اور وزیر اعلی سندھ سید مرا د علی شاہ کا کوئی عمل دخل نہیں ہے،ساری صورتحال کے ذمہ دار یہ خود ہیں،اِنہوں نے اسلحہ کی نمائش کی، کیا ہتھیاروں کے ساتھ پولنگ سٹیشن میں جانے کی اجازت ہے؟ حلیم عادل شیخ ہو یا میں ہوں یا کو ئی، قانون سے بالاتر کوئی بھی نہیں، قانون ہاتھ میں لیں گے، تو ظاہر ہے قا نو ن تو حر کت میں آئے گا۔ انہوں نے کہا کہ ملیر کے حلقے میں پیدا کی گئی صورتحال پر ڈسٹرکٹ ریٹرننگ آفیسر کو حلیم عا دل شیخ اور انکے ٹو لے کو علا قہ بدر کر نے کیلئے مجبورا انتظامیہ کو خط لکھنا پڑا،حلیم عادل شیخ پر پہلے ہی ایف آئی آرز درج تھیں اور کل کے واقعات پر بھی کیس داخل ہوا ہے ، کسی کے ساتھ کوئی زیادتی نہیں ہوگی لیکن یہ بھی نہیں ہو سکتا کہ کوئی قانون سے بالاتر ہو۔


Top