You are here
Home > پا کستا ن > پی ڈی ایم نے اپنا ٹارگٹ تبدیل کر لیا! لانگ مارچ کو کامیاب بنانے کے لیے 50 ہزار بندے کہاں سے لائیں جائیں گے؟ اپوزیشن کا بڑا فیصلہ ،کسے ٹاسک سونپ دیا؟

پی ڈی ایم نے اپنا ٹارگٹ تبدیل کر لیا! لانگ مارچ کو کامیاب بنانے کے لیے 50 ہزار بندے کہاں سے لائیں جائیں گے؟ اپوزیشن کا بڑا فیصلہ ،کسے ٹاسک سونپ دیا؟

اسلام آباد (نیوز ڈیسک)  کامیاب لانگ مارچ کے لیے اپوزیشن جماعتوں نے جنوبی پنجاب پر فوکس کرنا شروع کر دیا ہے۔

 اس حوالے سے قومی اخبار میں شائع رپورٹ کے مطابق مسلم لیگ ن نے حکومت مخالف لانگ مارچ کامیاب بنانے کے پیش نظر کارکنان کو نکالنے کے لیے جنوبی پنجاب پر فوکس کرنے کا فیصلہ کر لیا ہے۔ اس ضمن میں صوبائی قیادت کو جنوبی پنجاب سے پچاس ہزار کارکنان لانے کا ٹاسک سونپا جائے گا۔

رپورٹ کے مطابق جاتی امرا میں لیگی رہنماؤں میں غیر رسمی بات چیت ہوئی جس میں لانگ مارچ کو کامیاب بنانے کے لیے مختلف حکمت عملی پر غور کیا گیا۔ مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نواز نے جنوبی پنجاب سے متاثر کن تعداد میں عوام کو نکالنے پر زور دیا۔

 ذرائع نے بتایا کہ وسطی پنجاب سے متاثر کن تعداد میں کارکنان کا اسلام آباد کی طرف لانگ مارچ میں شرکت کا امکان معدوم لگ رہا ہے اس لیے فوکس ہوگا کہ جنوبی پنجاب سے کارکنان کولانگ مارچ میں شرکت کے لیے ذہنی طور پر تیا ر کیا جائے ، اس سلسلے میں مارچ کے شروع میں مقامی سطح پر جلسے بھی منعقد کرنے کا پروگرام ترتیب دیا جائے گا۔

سیاسی تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ اگر پی ڈی ایم حکومت کے خلاف لانگ مارچ کرنے میں کامیاب ہو جاتی ہے تو اس سے ملک میں ایک بحران یقیناً پیدا ہو جائے گا۔ لیکن فی الوقت پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) کے لانگ مارچ کی کامیابی کے امکانات معدوم ہیں۔

یاد رہے کہ پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) نے حکومت کو ٹف ٹائم دینے کے لیے سینیٹ انتخابات کے بعد 26 مارچ کو لانگ مارچ کرنے کا اعلان کر رکھا ہے۔ دوسری جانب پی ڈی ایم میں شامل اپوزیشن جماعتوں نے سینیٹ میں اپنے متفقہ اُمیدوار لانے کا بھی فیصلہ کیا تھا۔


Top