آج کی سب سے بڑی خبر۔۔!! بحریہ ٹاؤن کی جمع کردہ رقم کو استعمال کرنے کیلئے سپریم کورٹ نے تہلکہ خیز فیصلہ سُنا دیا

اسلام آباد (ویب ڈیسک) بحریہ ٹاوَن کی جمع کردہ رقم کے استعمال کے لئے سپریم کورٹ نے فیصلہ سنا دیا۔ نجی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق سپریم کورٹ میں بحریہ ٹاوَن کی جمع کردہ رقم کے استعمال سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی عدالت نے 460 ارب سندھ ترقیاتی منصوبوں پر خرچ کرنے

کیلئے کمیشن بنادیا،11رکنی کمیٹی کے سربراہ سپریم کورٹ کے جج ہونگے، کمیٹی میں گورنر سندھ، وزیر اعلیٰ سندھ، اٹارنی جنرل ، ایڈووکیٹ جنرل سندھ،چیف سیکریٹری سندھ، سینئر رکن سندھ بورڈ اف ریونیو، آڈیٹر جنرل پاکستان،اکاوَنٹنٹ جنرل سندھ، اورا سٹیٹ بینک کا نمائندہ کمیٹی میں شامل ہوگا،کمیشن میں 2 سماجی شخصیات کو بھی شامل کیا جائے گا۔ سپریم کورٹ نے کہا کہ پہلے سے جاری منصوبوں پر بحریہ ٹاؤن کا ملنے والا پیساخرچ نہیں ہوسکے گا،بحریہ ٹاؤن کا اب تک جمع شدہ پیساوفاق کو ملا نہ سندھ کو،کمیشن سندھ میں ضرورت کے مطابق نئے ترقیاتی منصوبے شروع کرے گا۔ واضح رہے کہ بحریہ ٹاؤن کراچی نے سات سال کے دوران سپریم کورٹ میں 460 ارب روپے جمع کرانے ہیں ،جسٹس شیخ عظمت سعید پر مشتمل تین رکنی بینچ نے بحریہ ٹاؤن عملدرآمد کیس کی سماعت کے دوران بحریہ ٹاؤن کراچی کی پیشکش قبول کرلی تھی جس کے تحت بحریہ ٹاؤن انتظامیہ کو 7 سال میں 460 ارب روپے کی ادائیگی کرنا ہوگی۔ پہلے چار سال میں ڈھائی ارب روپے ماہانہ اور باقی رقم تین سال میں ادا کی جائے گی۔ سپریم کورٹ نے قرار دیا تھا کہ بحریہ ٹاؤن اگر اقساط کی ادائیگی میں تاخیر کرے گا تو اسے 4 فیصد سود ادا کرنا ہوگا، رقم عدالت میں جمع ہوگی پھر اس کو قانون کے مطابق جس کو دینی ہے دیں گے۔ قبل ازیں سندھ حکومت کے ترجمان مرتضیٰ وہاب کا کہنا تھا کہ بحریہ ٹاؤن نے جو پیسے سپریم کورٹ میں جمع کروائے وہ سندھ حکومت کی ملکیت ہیں۔ سپریم کورٹ سے درخواست ہے کہ وہ سندھ کے حوالے کیے جائیں، سندھ کی عوام کا جو پیسہ ہے اسے ہمیں دیں، وزیراعظم نے کراچی کیلئے 162ارب روپے کا اعلان کیا,دیکھ رہے ہیں کہ وہ 162ارب کب کراچی آئیں گے۔