You are here
Home > پا کستا ن > کہانی میں نیا موڑ!عائشہ رجب کہاں تھی؟ (ن) لیگیوں کے لیے بھی یقین کرنا مشکل

کہانی میں نیا موڑ!عائشہ رجب کہاں تھی؟ (ن) لیگیوں کے لیے بھی یقین کرنا مشکل

فیصل آباد (نیوز ڈیسک ) پاکستان مسلم لیگ ن کے رہنما طلال چوہدری پر تشدد کے واقعے کی مزید تفصیلات سامنے آ گئی ہیں۔پولیس کا کہنا ہے کہ واقعے کی اطلاع پہلے لیگی رہنما طلال چوہدری نے دی۔ طلال چوہدری نے 23 ستمبر کی رات 15 پر 3 بج کر 10 منٹ پر کال کی تھی۔جب کہ دوسری کال

پانچ منٹ بعد آئی، یعنی عائشہ رجب کی جانب سے 3 بج کر 15 منٹ پر کال کی گئی تھی۔جب کہ فیصل آباد میں پارٹی ذرائع کا کہنا ہے کہ طلال چوہدری پر تشدد والی رات عائشہ رجب گھر پر نہیں تھیں۔حالت بہتر ہوتے ہی طلال چوہدری بیان ریکارڈ کروا دیں گے،وہ ویڈیو بیان بھی جاری کریں گے۔طلال چوہدری پر تشدد کی ویڈیو بھی جلد سامنے لائی جائے گی۔پارٹی زرائع کی جانب سے امکان ظاہر کیا گیا ہے کہ طلال چوہدری آج شام تک بیان ریکارڈ کروا سکتے ہیں،ابھی وہ زخمی ہیں،پہلے علاج کرا رہے ہیں، ہڈی ٹوٹنے کی وجہ سے طلال چوہدری کے بازو میں درد ہے۔واضح رہے کہ لیگی رہنما طلال چوہدری پر مبینہ طور پر ایم این اے عائشہ رجب کے بھائیوں کی جانب سے تشدد کیا گیا تھا،بتایا گیا کہ پاکستان مسلم لیگ ن کے رہنما طلال چوہدری اور ن لیگ کی رکن قومی اسمبلی عائشہ رجب علی کے مابین جھگڑا ہوا تھا جس کے بعد ان کے بھائیوں نے طلال چوہدری پر حملہ کیا ، جھگڑے کے نتیجے میں طلال چوہدری کا بازو دو جگہ سے فریکچر ہوا جب کہ ان کے بائیں بازو کی سرجری لاہور کے نجی اسپتال میں کی گئی ۔اسپتال ذرائع کا اس حوالے سے کہنا تھا کہ طلال چوہدری کے سر اور کمر پر شدید چوٹیں آئی ہیں ، جھگڑے میں طلال چوہدری کی مختلف ہڈیاں بھی فریکچر ہوئی ہیں ، طلال چوہدری کو نجی اسپتال کے ایگزیکٹو روم میں رکھا گیا۔پولیس کے بیان ریکارڈ کروانے سے قبل ہی طلال چوہدری اسپتال سے چلےگئے تھے۔


Top