بریکنگ نیوز: حلوے مانڈے کھانے کا حساب دینے کا وقت ، نیب پشاور نے کارروائی ڈال دی ، ملکی سطح پر ہلچل مچا دینے والی گرفتاری ڈال دی گئی

پشاور (ویب ڈیسک) نیب نے پشاور میں مولانا فضل الرحمان کے قریبی ساتھی موسیٰ خان کو گرفتار کرلیا۔ ملزم موسی خان کو نیب عدالت میں پیش کیا گیا۔نیب پشاور کی کارروائی ، سابق ڈی جی ایف او موسیٰ خان بلوچ گرفتار کرلیا ہے۔ موسیٰ خان کے خلاف آمدن سے زائد اثاثوں کی انکوائری جاری تھی۔

نیب ذرائع کے مطابق موسیٰ خان کے بڑے بیٹے مولانا فضل الرحمان کے پرسنل سیکریٹری ہیں۔ فضل الرحمان کے دست راست کو خیبر پختونخوا کے شہر پشاور سے قومی احتساب بیورو کے حکام نے گرفتار کیا۔ نیب حکام کی جانب سے گرفتاری کے بعد انہیں احتساب عدالت میں پیش کردیا گیا۔ یہاں یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ سابق ڈی ایف او موسیٰ خان کا بڑا بیٹا طارق بلوچ ، مولانا فضل الرحمان کا پرسنل سیکریٹری بھی ہے۔ موسیٰ خان بلوچ کے خلاف آمدن سے زاید آثاثوں کے الزام میں انکوائری جاری تھی۔ موسیٰ خان اس وقت سیاست میں فعال اور مولانا فضل الرحمن کے قریبی رفقاء میں شامل واضح رہے کہ اس سے قبل 22 ستمبر کو نیب نے جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان کیخلاف انکوائری کا آغاز کرتے ہوئے آمدن سے زائد اثاثوں کے کیس میں جے یو آئی ف کے سربراہ کو یک اکتوبر کو طلب کیا ہے۔ بظاہر قومی احتساب بیورو کی جانب سے جاری نوٹس میں کہا گیا ہے کہ سابق رکن قومی اسمبلی مولانا فضل الرحمان اور دیگر کو بد عنوانی کے الزام کے بارے میں انکوائری کے لیے طلب کیا جاتا ہے۔ اس نوٹس میں انھیں قومی احتساب بیورو پشاور کے دفتر میں یکم اکتوبر کو حاضر ہونے کے لیے کہا گیا ہے۔ بنیادی طور پر یہ انکوائری آمدن سے زیادہ اثاثے رکھنے کے الزام پر کی جا رہی ہے۔ نیب نوٹس پر مولانا فضل الرحمان کا کہنا تھا کہ انھیں کوئی نوٹس نہیں ملا اور یہ بد نیتی پر مبنی ڈھنڈورا میڈیا کے ذریعے پیٹا جا رہا ہے۔