You are here
Home > پا کستا ن > میں شمالی علاقہ جات کی سیر کو نہیں جانا چاہتا صافی صاحب: سلیم صافی کے کس سوال کے جواب میں ندیم افضل چن نے یہ بات کہی ؟ دلچسپ اور معنی خیز انکشاف

میں شمالی علاقہ جات کی سیر کو نہیں جانا چاہتا صافی صاحب: سلیم صافی کے کس سوال کے جواب میں ندیم افضل چن نے یہ بات کہی ؟ دلچسپ اور معنی خیز انکشاف

کراچی ( ویب ڈیسک) تحریک انصاف کے رہنما ندیم افضل چن نے کہا ہے کہ نیب حکومت کے ماتحت نہیں ہے، سلیم صافی کے سوال نیب کس کے ماتحت ہے؟ پر ندیم افضل چن کا کہنا تھا کہ میں شمالی علاقہ جات نہیں جانا چاہتا، سیاست بے توقیر ہونے کی ذمہ داری سیاسی جماعتوں کی قیادت پر

آتی ہے۔ یہاں لوگ نظریے کا نہیں اپنی قیادت اور ان کے کیسوں کا دفاع کرتے نظر آتے ہیں، سیاسی قیادت میں دوستی کی روایت ن لیگ نے آکر ختم کی ہے۔وہ جیو نیوز کے پروگرام ”جرگہ“ میں میزبان سلیم صافی سے گفتگو کررہے تھے۔ پاکستان میں سیاست بے توقیر کیوں…؟ کے موضوع پر ہونے والے پروگرام میں ن لیگ کے رہنما سینیٹر مصدق ملک اور پیپلز پارٹی کے رہنما سینیٹر مصطفی نواز کھوکھربھی شریک تھے۔ سینیٹر مصدق ملک نے کہا کہ سیاستدانوں کے ایک دوسرے پر کیچڑ اچھالنے سے سیاست کمزور ہوتی ہے، پیپلز پارٹی میں تہذیب کو ملحوظ رکھنے کا کلچر ہمیشہ بہتر رہا جبکہ ن لیگ میں بھی بہتر ہوگیا ہے۔مصطفی نواز کھوکھرنے کہا کہ عوام کی اکثریت سیاست بے وقار ہونے کی وجہ تحریک انصاف کو سمجھتی ہے، اس وقت حکومت کا رویہ حکومت والا اور اپوزیشن کا اپوزیشن والا نہیں ہے، اس کی وجہ اپوزیشن کی سیاسی جماعتوں میں سوچ کا اختلاف ہے، فیصلہ کرنا ہوگا ملک کو سیکیورٹی لینس سے دیکھنا ہے یا عوام کے لینس سے دیکھنا ہے۔ دوسری جانب ایک خبر کے مطابق قطر میں جاری بین الاافغان مذاکرات میں افغان طالبان نے اسلامی نظام اور مزید سات سو سینتیس قیدیوں کی رہائی کا مطالبہ کر دیا۔ اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل نے مذاکرات کا خیر مقدم کرتے ہوئے کہا ہے امید ہے افغان مہاجرین جلد اپنے وطن لوٹ جائیں گے۔ امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو نے کہا امریکا پرامن افغانستان کی حمایت کرتا ہے۔دوحہ میں بین الاافغان مذاکرات کا پہلا مرحلہ جاری ہے، افغان حکومت کے وفدکے سربراہ عبداللہ عبداللہ نے ملک کے تمام حصوں میں انسانی بنیادوں پر امن کے قیام کامطالبہ کیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ امن معاہدے کے بعد بھی بین الاقوامی معاونت کی ضرورت ہو گی۔مذاکرات میں افغان طالبان نے اسلامی نظام اور مزید سات سو سینتیس قیدیوں کی رہائی کا مطالبہ کر دیا۔۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق افغان حکومت اور طالبان مزاحمت کاروں کے وفود کے درمیان قطر کے دارالحکومت دوحہ میں امن مذاکرات جاری ہیں۔اس موقع پر امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو نے متحارب فریقوں پر زوردیا کہ وہ اس موقع سے فائدہ اٹھائیں اور ایک جامع امن معاہدہ طے کریں۔ البتہ انھوں نے یہ بات تسلیم کی کہ ابھی بہت سے چیلنجز درپیش ہوں گے۔


Top