آئی جی کی تبدیلی مہنگی پڑ گئی ! ایڈینشل آئی جی سمیت کس کس افسر نے کام کرنے سے انکار کر دیا؟ عثمان بزدار کے لیے حالات کنٹرول کرنا مشکل ہوگیا

لاہور(ویب ڈیسک) ایڈیشنل آئی جی ویلفیئر اینڈ فنانس طارق مسعود کاکام کرنے سے انکار کردیا۔ طارق مسعود یاسین نے نئے آئی جی کے نیچے کام کرنے سے معذرت کرلی۔ایڈیشنل آئی جی ویلفیئر اینڈ فنانس نے نئے آئی جی انعام غنی کے نیچے کام کرنے سے معذرت کرلی ہے۔ انہوں نے کہا

کہ انعام غنی میرے سے جونیئر ہیں اسلئے کام نہیں کروں گا۔ طارق مسعود یاسین نے اپنے تحفظات سے ڈی آئی جی ہیڈکوارٹر کو آگاہ کردیا۔ واضح رہے کہ نجی ٹی وی دنیا نیوز نے ذرائع کے حوالے سے دعویٰ کیاہے کہ انعام غنی کو نیا آئی جی پنجاب تعینات کر دیا گیاہے۔تفصیلات کے مطابق سی سی پی او عمر شیخ اور سابق آئی جی پنجاب شعیب دستگیر کے درمیان تنازع کے پیش نظر وفاقی حکومت نے آئی جی پنجاب کو تبدیل کرنے کا فیصلہ کیا تھا ۔ تاہم اب خبر موصول ہو رہی ہے کہ پنجاب حکومت کی جانب سے انعام غنی کو نیا آئی جی پنجاب تعینات کرنے کی منظور ی دیدی گئی ہے ۔ وزیراعظم عمران خان اور وزیر اعلیٰ پنجاب عثمان بزدار کے درمیان کچھ دیر پہلے مشاورت بھی جاری رہی ۔نئے تعینات ہونے والے آئی جی پنجاب انعام غنی ایڈیشنل آئی جی پنجاب خدمات انجام دیتے رہے ہیں جبکہ ، ایڈیشنل آئی جی جنوبی پنجاب تعینات تھے ، وہ وہاں معاملات دیکھ رہے تھے ۔ انعام غنی فرنٹ فٹ پر رہ کر کام کرنے کی شہرت رکھتے ہیں ، وہ 21 ویں گریڈ کے افسر ہیں جبکہ اس کے علاوہ وہ پنجاب پولیس کے ترجمان بھی رہ چکے ہیں ۔وفاقی کابینہ کے اجلاس میں بھی پنجاب کے آئی جی تبدیلی سے متعلق بات چیت ہوئی اور وزیراعظم عمران خان نے کابینہ کو بھی تبدیلی کیلئے اعتماد میں لیا ۔یہاں یہ امر قابل ذکر ہے کہ آئی جی پنجاب شعیب دستگیر سی سی پی او لاہور عمر شیخ کو مبینہ طور پر مشاورت کے بغیر تعینات کرنے کے معاملے پر ڈٹ گئے تھے اور انہوں نے کام بھی روک دیا تھا ۔