’’یہ کام ہر حال میں کرنا ہے۔‘‘ وزیراعظم عمران خان کی بابر اعوان سے ملاقات، بڑا حکم دے ڈالا، اپوزیشن پر سکتہ طاری

اسلام آباد (ویب ڈیسک) ذرائع کے مطابق وزیراعظم عمران خان سے مشیر پارلیمانی امور بابر اعوان کی ملاقات ہوئی ہے۔ ملاقات میں اہم آئینی، قانونی اور ملکی امور پر تبادلہ خیال کیاگیا،ایف اے ٹی ایف سے متعلق قانون سازی اور پارلیمانی معاملات پر مشاورت کی گئی ،بابر اعوان نے وزیراعظم کو ایف اے ٹی ایف

قانون سازی سے متعلق بریفنگ دی۔وزیراعظم نے پیرسے قومی اسمبلی اور سینیٹ کا اجلاس منعقد کرنے کی ہدایت کر دی،وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ ایف اے ٹی ایف قوانین ہر صورت منظور کروائیں گے۔ بابر اعوان کی وزیراعظم کو مختلف وزارتوں کے زیر التوابلز پر بھی بریفنگ دی،وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ ملکی سلامتی اور عوامی مفاد کی قانون سازی میں تاخیر نہیں ہونی چاہیے، عام آدمی کو ریلیف فراہم کرنے کے ہر ممکن اقدامات کیے جا رہے ہیں،مکمل توجہ معاشی اور سماجی حالات کی بہتری پر مرکوز کر رکھی ہے۔ بابر اعوان کا کہنا تھا کہ عوامی ریلیف کےلیے کیے گئے حکومتی اقدامات کے مثبت نتائج مل رہے ہیں، پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ نہ کر کے عوام کو ریلیف دیا گیا۔ واضح رہے کہ سینیٹ میں قائد ایوان ڈاکٹرشہزاد وسیم کے بیان پر اپوزیشن اراکین نے احتجاج کرتے ہوئے قومی اسمبلی سے منظور شدہ بلوں کو مسترد کردیا تھا اور حکومت پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ ملک کی خارجہ پالیسی وزارت خارجہ میں نہیں بنتی۔ ذرائع کےمطابق چیئرمین صادق سنجرانی کی زیر صدارت سینیٹ کا اجلاس ہوا اوراپوزیشن نے وقفہ سوالات مؤخر کرنے پر ایوان میں احتجاج کیا اور واک آؤٹ کیا۔اس موقع پر سینیٹر عثمان کاکڑ نے کہا کہ وقفہ سوالات مؤخر کرنا درست عمل نہیں ہے۔ سابق چیئرمین رضاربانی کا کہنا تھا کہ جب فنانشل ایکشن ٹاسک فورس (ایف اے ٹی ایف) سے متعلق بل بلڈوز کرنا ہی ہے تو سوالات کو مؤخر کیوں کیا جارہا ہے۔انہوں نے کہا کہ حکومت احتساب سے کیوں بھاگ رہی ہے۔ سینیٹ میں اپوزیشن کی طرف سے ایف اے ٹی ایف بل کے مسترد ہونے کی خبرسب سے پہلے معروف رپورٹرصدیق جان نے دی ان کا کہنا تھا کہ اپوزیشن نے اپنے مفاد کی خاطر قومی مفاد کو قربان کردیا اوردوبلوں کو جو قومی اسمبلی سے پاس ہوئے تھے مسترد کردیا ہے۔