جنرل (ر) عاصم سلیم باجوہ کے اثاثوں کا معاملہ! وفاقی حکومت نے بڑا اعلان کر دیا

اسلام آباد( ویب ڈیسک ) وفاقی وزیر اطلاعات شبلی فراز نے کہا ہے کہ سی پیک اتھارٹی کے چیئرمین جنرل ریٹائرڈ عاصم باجوہ اپنے اثاثوں سے متعلق رپورٹ کے بارے میں وضاحت کریں گے۔گزشتہ روز شبلی فراز اسلام آباد میں پریس کانفرنس کر رہے تھے۔ اس موقع پر صحافیوں نے ان سے الزامات کے بارے میں پوچھا

جس پر شبلی فراز نے جواب دیا کہ باجوہ صاحب کو میرا یہی مشورہ ہے کہ وہ آکر اس کی وضاحت کردیں کیوں کہ میرا نہیں خیال کہ جو باتیں ہورہی ہیں وہ درست ہیں۔بعد ازاں وزیر اطلاعات شبلی فراز نے ٹوئٹ کرتے ہوئے کہا کہ ‏’میری عاصم باجوہ صاحب سے ابھی بات ہوئی ہے۔ وہ تفصیل سے چند دنوں میں اپنے اثاثوں کے متعلق خبروں کی وضاحت کریں گے۔’

واضح رہے کہ احمد نورانی نے اپنی حالیہ اسٹوری میں انکشاف کیا ہے کہ عاصم باجوہ، ان کے بیٹے اور بیگم کے نام پر پاکستان سمیت دیگر کئی ممالک میں کاروبار اور جائیدادیں ہیں جو انہوں نے اپنے اثاثہ جات کے گوشواروں میں ظاہر نہیں کیے۔اسٹوری شائع ہونے کے فوری بعد عاصم باجوہ نے ٹوئٹ کرتے ہوئے الزامات کو مسترد کردیا تھا۔احمد نورانی کی اسٹوری ایک آن لائن ویب سائٹ فیکٹ فوکس ویب سائٹ پر شائع ہوئی جس کے مطابق عاصم باجوہ کے بھائی ندیم باجوہ نے امریکا کی معروف فوڈ چین پاپا جونز کا پہلا ریسٹورنٹ 2002 میں قائم کیا۔ اسی سال جنرل (ر) عاصم باجوہ کی جنرل پرویز مشرف کے اسٹاف آفیسر کے طور پر تعیناتی ہوئی۔احمد نورانی کے مطابق ندیم باجوہ نے اپنے کاروباری سفر کا آغاز پاپا جونز پیزا ریسٹورنٹ میں بطور ڈیلیوری ڈرائیور کیا تھا، اب ان کے بھائیوں اور عاصم باجوہ کی اہلیہ اور بچوں کی چار ممالک میں 99 کمپنیاں اور 130 فعال فرنچائز ریسٹورنٹس ہیں جن کی موجودہ ویلیو تقریبا چالیس ملین ڈالر (6 ارب 70کروڑ پاکستانی روپے) بنتی ہے۔