بینکوں پر اربوں روپے جرمانہ، نجی بینک کیا شرمناک کام کرتے تھے؟ اسٹیٹ بینک کا تاریخ میں پہلی بار بڑا ایکشن

کراچی (ویب ڈیسک) بنیکوں پر اربوں روپے جرمانہ۔ سٹیٹ بینک نے صارفین کی معلومات نہ رکھنے اور فارن ایکسچینج قوانین کی خلاف ورزیاں کرنے والے پندرہ کمرشل بینکوں پر بھاری جرمانے عائد کردیا ۔جرمانے اینٹی منی لانڈرنگ اور دہشت گردی کی فنانسنگ سے متعلق بھی کیے گئے، 15 بینکوں پر قوانین کی

خلاف ورزی پر 1 ارب 68 کروڑ روپے کے بھاری جرمانے کیے، بینکوں پر مارچ سے جون 2020 کے دوران جرمانے کئے گئے ہیں۔اسٹیٹ بینک نے بینکوں پر جرمانے عوام کے سامنے جولائی 2019 سے لانا شروع کیا ہے۔ اسٹیٹ بینک نے تمام پندرہ بینکوں کے نام کی تفصیلات جاری کردیں۔ مسلم کمرشل بینک پر قوانین کی خلاف ورزی پر 15کروڑ84لاکھ روپے کا جرمانہ ہوا۔ جبکہ نیشنل بینک پر 26کروڑ98لاکھ روپے کا جرمانہ عائد کیا گیا۔اسی طرح بینک آف پنجاب پر 28کروڑ63لاکھ روپے سے زائد کا جرمانہ ہوا، یونائیٹڈ بینک پر 13کروڑ 70لاکھ روپے کا جرمانہ عائد کیا گیا۔ پابندیوں میں دیگر بینکس بھی شامل ہیں۔ اسٹیٹ بینک نےقوانین کی خلاف ورزی کرنے پر 15 کمرشل بینکوں پر بھاری جرمانے عائد کر دیے۔ اسٹیٹ بینک کے مطابق ان 15 بینکوں پر صارفین کی معلومات نہ رکھنے، فارن ایکسچینج قوانین کی خلاف ورزی کرنے پر ایک ارب68 کروڑ روپےکے جرمانے عائد کیے گئے ہیں۔ یہاں یہ بات اہم ہے کہ کمرشل بینکوں پر یہ تمام جرمانے مرکزی بینک نے مارچ سے جون 2020 کے دوران کیے ہیں۔