یا اللہ رحم ۔۔۔!!! کورونا کے بعد کون سا بڑا طوفان پاکستان کا منتظر ہے؟ حکومت پاکستان نے قوم کو پیشگی آگاہ کر دیا

اسلام آباد(ویب ڈیسک ) وفاقی وزیر سائنس اینڈ ٹیکنالوجی فواد چوہدری نے کہا ہے کہ پاکستان میں کورونا کا زیادہ دباوجون کے وسط تک سامنے آئے گا۔سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر سے جاری اپنے پیغام میں انہوں نے کہا کہ آج وزارت سائنس کی ایکسپرٹ کمیٹی نے تین بنیادی نکات پر رائے دی ہے۔ان کا کہنا تھا کہ اجتماعی مدافعت کا تصور انتہاءخطرناک ہو سکتا


ہے اس طرح کی کوئی حکمت عملی ہر گز نہیں اپنانی چاہئے۔انہوں نے کہا کہ کورونا زکام نہیں بلکہ یہ ایک پیچیدہ مسئلہ ہے، رائے تو ہر شخص دے سکتا ہے۔فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ میرے خیال میں وزیر اعظم کی اسمارٹ لاک ڈاون پالیسی ہی مسئلے کا حل ہے۔انہوں نے کہا کہ اگر احتیاط کے بغیر لاک ڈاون کھولا گیا تو بہت نقصان بھی ہو سکتا ہے۔جبکہ دوسری جانب ایک خبر کے مطابق سندھ حکومت کی جانب سے ٹرینیں چلانے کے فیصلے کی مخالفت، صوبائی وزیر برائے ٹرانسپورٹ اویس قادر شاہ کا کہنا ہے کہ ایس او پیز پر عمل نہ ہونے کی صورت میں ٹرینوں کو روکنے کی دھمکی، ٹرینوں کی بحالی پر سندھ کو اعتماد میں لئے بغیر فیصلہ کیا گیا، ایس او پیز پر عمل نہیں ہوا تو شیخ رشید کو استعفیٰ دینا ہوگا، ٹرینیں چلنے کہ بعد میڈیا کو لیکر ریلوے اسٹیشن پر جائیں گی، ان کو دکھائیں گے ایس او پی پر عمل نہیں ہورہا۔وزیرٹرانسپورٹ اویس قادرشاہ نے وزیراعظم کے ٹرین بحالی کے فیصلے پر ردعمل میں کہا ہے کہ ٹرینوں کی بحالی پر سندھ کو اعتماد میں لئے بغیر فیصلہ کیا گیا,دیکھیں گے وزیرریلوے اپنی زبان پرکتناعمل کرتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ ٹرینیں چلنے کہ بعد میڈیا کو لیکر ریلوے اسٹیشن پر جائیں گی، ان کو دکھائیں گے ایس او پی پر عمل نہیں ہورہا ہے۔ سندھ حکومت ٹرین چلانے کہ مخالف نہیں ہیں ، اگر اداریکو خسارہ ہوتاہے تو کیا کا الزالہ لوگوں کی جان سے کریں اگر ریلوے ایس او پیز پر عملدرآمد کراسکتی ہے تو تمام ٹرینیں چلائے ورنہ ہم ٹرینوں کو روکیں گے۔ صوبائی وزیر کا مزید کہنا ہے کہ وفاقی وزیر شیخ رشید احمد کی باتوں میں تضاد ہے،شیخ رشید پورے پاکستان کوسفر کرانا چاہتے ہیں، کراچی میں آن لائن ٹکٹنگ پہلے سے ہی جاری ہے۔ وفاق کچھ معاملات پر سندھ حکومت سے مشاورت نہیں کرتا، ویراعظم نے کہا تھا صوبے ٹرانسپورٹ سے متعلق ایس او پیز بنائیں ان پر عمل کیا جائے گا۔