عالمی وباء کے طویل المیعاد اثرات!! کورونا کے خاتمے کا حتمی فیصلہ۔۔۔ ورلڈ بینک نے پاکستانیوں کو خوشگوار خبر سنا دی

واشنگٹن (ویب ڈیسک) پاکستان میں عالمی بینک کے کنٹری ڈائریکٹرالانگوپیچوموتو نے کہاہے کہ کورونا وائرس کی وباءکے طویل المیعاد اثرات سے نمٹنے کیلئے عالمی بینک پاکستان کی وفاقی اورصوبائی حکومتوں کے ساتھ مل کرقریبی کام کررہا ہے۔ سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر جاری ہونے والے ایک پیغام میں انہوں

نے کہا کہ کورونا وائرس کی عالمگیر وبا کے تناظرمیں پاکستان میں روزگارکے تحفظ کیلئے عالمی بنک وفاقی اورصوبائی حکومتوں کے ساتھ مل کرکام کررہا ہے۔ انہوں نے کہاکہ جدید ٹیکنالوجی کے زریعہ بچوں کوتعلیم کی فراہمی کے ساتھ ساتھ عالمی بینک نے ایک ہفتہ کی مدت میں ملک بھر میں طبی اور دیگر ضروری اشیاءکی فراہمی کیلئے پہلے سے جاری منصوبوں سے 40 ملین ڈالر کی رقم جاری کردی ہے۔انہوں نے کہاکہ ملک بھر میں کورونا وائرس کی وبا سے فرنٹ لائن پر لڑنے والے طبی عملہ اورامدادی کارکنوں کوضروری حفاظتی لباس کی فراہمی کیلئے بنک تعان کررہاہے۔ عالمی بنک کے کنٹری ڈائریکٹرنے کہاکہ پیر تک ملک کے مختلف حصوں میں 18 لاکھ حفاظتی کٹس، ضروری طبی آلات، وینٹی لیٹرز، ایکسرے مشین اورالٹراساونڈ مشینوں کی فراہمی عمل میں لائی گئی ہے۔ دوسری جانب عالمی بینک نے پاکستان کو نیا قرض دینے پر غور شروع کر دیا ہے، اس حوالے سے ذرائع کا کہنا ہے عالمی بینک 50 کروڑ ڈالر کی رقم مئی 2020 میں پاکستان کو فراہم کرسکتا ہے، ملنے والی رقم کی بدولت کورونا وائرس سے ہونے والے نقصانات کا تخمینہ لگایا جائے گا، اس مقصد کے لئے عوام کی رجسٹریشن کی جائے گی جس میں صحت، تعلیم، پیشہ اور دیگر معلومات کا اندراج کیا جائے گا۔ ذرائع کے مطابق پاکستان کو ایک ارب ڈالر کی اضافی رقم فراہم کرنے کی لئے عالمی بینک نے کام کرنا شروع کررکھا ہے،عالمی بینک کی جانب سے یہ رقم صحت، ماحولیات، تعلیم اور فوڈ سیکیورٹی کے شعبے میں خرچ کی جائے گی جبکہ عالمی بنک کی جانب سے 20 کروڑ ڈالر کی پہلے منظوری دی جا چکی ہے جن میں سے 15 کروڑ ڈالر سے میڈیکل آلات خریدنے کیلئے استعمال کیے جائیں گے اور 5 کروڑ ڈالر احساس پروگرام کے تحت غریب خاندانوں میں تقسیم کیے جائیں گے اور اب توقع ہے کہ اگلے ماہ مزید 50 کروڑڈالر کی منظوری دی جائے گی۔