بجلی کے بلوں میں لگ کر آنیوالی پی ٹی وی فیس میں کتنااضافہ کر دیا گیا؟ بے روزگاری کے ستائے پاکستانی سٹپٹا کر رہ گئے

اسلام آباد (ویب ڈیسک) وفاقی کابینہ نے سرکاری ٹی وی کو فائدہ پہنچانے کے لیے بجلی کے بلوں میں وصول کی جانے والی فیس 35 سے بڑھا کر 100 روپے کرنے کی منظوری دے دی۔سرکاری ٹی وی کی لائسنس فیس کی مد میں بجلی کے بلوں میں عوام سے 35 روپے وصول کیے جاتے تھے جس سے

سرکاری ٹی وی ساڑھے 7 ارب روپے سالانہ کما رہا تھا مگر اب 65 روپے کا مزید اضافہ کرکے ایک سال میں 21 ارب روپیہ اکٹھا کیا جائے گا۔وفاقی کابینہ کی جانب سے یہ اضافہ ایسے وقت کیاگیا ہے جب آل پاکستان نیوز پیپر سوسائٹی (اے پی این ایس) اور پاکستان براڈ کاسٹرز ایسوسی ایشن (پی بی اے) حکومت کے ذمے 6 ارب روپے کے بقایا جات کی ادائیگی کے لیے بار بار کہہ رہی ہے لیکن حکومت ٹس سے مس نہیں ہو رہی۔پی ٹی وی غریب عوام سے 100 روپے زبردستی لےگا جبکہ وہ پرائیویٹ اشتہارات بھی چلاتا ہے۔جبکہ دوسری جانب ایک خبر کے مطابقکرونا کے مساجد و مدارس پر اثرات ،پاکستان علما کونسل نے وزیر اعظم عمران خان سے مساجد و مدارس کے چار ماہ کے بجلی بلز معاف کرنے کا مطالبہ کردیا جس پر حکومت نے غور شروع کر دیا ہے،مدارس کے آئمہ موذن اساتذہ کو بھی حکومتی ریلیف میں حصہ دیا جائے، علامہ طاہر اشرفی کا خط میں مطالبہ۔ پاکستان علما کونسل کے چیئرمین علامہ طاہر محمود اشرفی نے وزیر اعظم عمران خان سے مساجد و مدارس کے چار ماہ کے بجلی بلز معاف کرنے کا مطالبہ کردیا۔ علامہ طاہر اشرفی نےوزیر اعظم کے نام کھلے خط میں مطالبہ کیا کہ مدارس کے آئمہ موذن اساتذہ کو بھی حکومتی ریلیف میں حصہ دیا جائے۔ علامہ طاہر اشرفی نے خط میں مطالبہ کیا ہے کہ ،عوام الناس موجودہ مہینوں رمضان شوال میں مساجد و مدارس سے تعاون کرتے تھے ،کرونا کی وجہ سے لاک ڈاون کاروبار بند ہے ،مساجد مدارس بند ہیں لوگ مساجد مدارس کی مدد نہیں کرپا رہے ،لوگوں کی سکت اور مساجد مدارس کی بندش کے باعث یوٹیلٹی بلز چار ماہ کے لئے معاف کئے جائیں۔دوسری طرف امیر جماعت اسلامی سراج الحق نے بھی مطالبہ کیا ہے کہ حکومت فوری طور پر بجلی و گیس کے بلوں کی معافی کا اعلان کرے۔خیال رہے کہ حکومت پہلے اعلان کر چکی ہے کہ بجلی اور گیس کے بل فوری ادا کرنے کی ضرورت نہیں بلکہ تین ماہ بعد بھی ادا کیے جا سکتے ہیں۔