نیا پاکستان بن گیا۔۔۔۔ سرکاری ملازمین کو کونسی عام چیز استعمال کرنے سے روک دیا گیا؟ناقابل یقین خبر

لاہور(ویب ڈیسک) صوبائی حکومت کی جانب سے جاری کئے گئے احکامات کے بعد اب صوبہ پنجاب کے سرکاری ملازمین دفاتر میں واٹس ایپ استعمال نہیں کرسکیں گے۔ صوبائی حکومت نے یہ پابندی سرکاری اور خفیہ معلومات کو غیر متعلقہ افراد تک پہنچنے سے روکنے کیلئے عائد کی ہے۔نجی ٹی وی ہم نیوز نے صوبائی عہدیداروں کے

حوالے سے بتایا ہے کہ اس ضمن میں محکمہ سروسز اینڈ جنرل ایڈمنسٹریشن (ایس اینڈ جی اے ڈی) کی جانب سے احکامات جاری کردیئے گئے ہیں۔رپورٹ کے مطابق پنجاب حکومت نے غیر متعلقہ افراد پر خفیہ معلومات افشاں ہونے کے خدشات کے پیش نظر دفاتر میں واٹس ایپ کے ذریعے سرکاری دستاویزات کی شیئرنگ پر پابندی عائد کردی ہے۔حکام کو اس ضمن میں شکایات موصول ہوئی تھیں کہ سرکاری محکمے اپنے دفتری معاملات چلانے کے لئے واٹس ایپ کا استعمال کررہے ہیں اور میسجنگ سروس پر دستاویزات کا تبادلہ کیا جارہا ہے۔جبکہ دستاویزات شیئرنگ کے لیے واٹس گروپس بھی تشکیل دیئے گئے ہیں جہاں سے یہ دستاویزات لیک ہوئی ہیں۔اعلی افسران نے اس سنگین معاملے کا نوٹس لیتے ہوئے تمام محکموں کو ہدایت کی ہے کہ وہ حکومت کو ممکنہ خطرات کے پیش نظر کراس پلیٹ فارم میسجنگ سروس پرسرکاری دستاویزات اور معلومات کا تبادلہ کرنے سے اجتناب کریں۔مزید یہ کہ تمام سیکشن افسران ، لاءافسران اور ریاستی افسران کو بھی احکامات کے بارے میں آگاہ کیا گیا ہے کہ احکامات کے مطابق پابندی پر فوری عمل درآمد کیا جائے گا۔