فیصل واوڈا کو کام سے روکا جائے۔۔۔!!! عدالت سے بڑی خبر، حکومتی صفوں میں ہلچل مچ گئی

اسلام آباد (نیوز ڈیسک ) اسلام آباد ہائیکورٹ نے رہنما تحریک انصاف و رکن قومی اسمبلی فیصل واوڈا کو دہری شہریت چھپانے پر نااہلی کیس میں نوٹس جاری کردیا ہے۔ تفصیلات کے مطابق اسلام آباد ہائیکورٹ نے الیکشن کمیشن سمیت دیگر فریقین کو نوٹس جاری کرتے ہوئے دو ہفتوں میں جواب طلب کر لیا ہے۔

ہائیکورٹ کے جج جسٹس عامر فاروق نے کیس کی سماعت کی۔دوران سماعت جسٹس عامر فاروق نے استفسار کیا کہ الیکشن کمیشن میں نامزدگی فارم جمع کرانے کی آخری تاریخ کیا تھی ؟ کیا الیکشن کمیشن میں جو حلف نامہ جمع کرایا گیا وہ درست نہیں تھا ؟ جس پر درخواست گزار کے وکیل نے جواب دیتے ہوئے کہ کہ 11 جون آخری تاریخ تھی جس پر وکیل نے 11 جون کو فیصل واوڈا کی جانب سے جمع کرایا گیا حلف نامہ عدالت کے سامنے پڑھ کر سنایا۔فیصلہ واوڈا نے جھو ٹا حلف نامہ جمع کرایا۔ فیصل واوڈا کو کام سے روکا جائے ۔ واضح رہے گزشتہ روز فیصل واوڈا کی دہری شہریت چھپانے پرنااہلی کے لیے اسلام آباد ہائیکورٹ میں وکیل میاں محمد فیصل نے ایڈووکیٹ جہانگیر خان جدون کے درخواست دائر کر دی گئی درخواست میں موقف اختیار کیا گیا کہ 2018الیکشن کے نامزدگی فارم جمع کراتے ہوئے فیصل واوڈا امریکی شہریت رکھتے تھے الیکشن کمیشن میں فیصل واوڈا نے دہری شہریت نہ ہونے کا جھوٹا حلف نامہ جمع کرایا فیصل واوڈا نے دہری شہریت چھپا کر اور جھوٹی بیان حلفی دے کر بددیانتی کی درخواست گزار نے موقف اختیار کیا کہ سپریم کورٹ واضع کر چکی کہ نامزدگی فارم جمع کراتے وقت دوہری شہریت چھوڑنے کاسرٹیفکیٹ دینا ضروری ہے درخواست میں استدعا کی گئی کہ فیصل واوڈا کو دوہری شہریت رکھنے اور جھوٹا حلف نامہ دینے پر نااہل کیا جائے فیصل واوڈا کی ممبرشپ فوری معطل کرکے قومی خزانے کو نقصان پہنچانے پر ریکوری کی جائے درخواست میں وفاقی وزیر فیصل واوڈا،سیکرٹری کابینہ ڈویژن اور سیکرٹری قانون وانصاف کے علاوہ سیکرٹری قومی اسمبلی اور الیکشن کمیشن آف پاکستان کو فریق بنایا گیا۔