بریکنگ نیوز:نامور حکومتی ادارے کے ملازمین کی سنی گئی۔۔۔ ہر ایک کے لیے نئی گاڑیاں اور موٹرسائیکل خریدنے کا فیصلہ

لاہور (ویب ڈیسک)لاہور ٹریفک پولیس کی چودہ سال بعد سنی گئی، ٹریفک پولیس کے لیے نئی گاڑیاں اور موٹر سائیکلیں خریدنے کا فیصلہ کر لیا گیا۔ آئی جی آفس میں نئی گاڑیاں اور موٹر سائیکلیں خریدنے کے لیے اقدامات شروع کر دیے گئے۔چودہ سال پہلے لاہور میں ٹریفک وارڈن سسٹم کے آغاز کے ساتھ انکے لیے نئی گاڑیاں

؎اور موٹر سائیکلیں خریدی گئیں، لیکن اس کے بعد سے اب تک ٹریفک پولیس کو نہ کوئی نئی گاڑی ملی اور نہ ہی موٹر سائیکل جبکہ بعد ازاں ٹریفک وارڈن سسٹم کو دیگر اضلاع میں بھی متعارف کروا دیا گیا۔ٹریفک پولیس کی جانب سے بارہا گاڑیوں اور موٹر سائیکلوں کی خرابی کے بارے میں بتایا گیا، تاہم اس پر کوئی اقدامات نہ ہوئے۔ موجودہ آئی جی شعیب دستگیر نے اس حوالے سے نئی گاڑیاں اور موٹر سائیکلیں خریدنے کا فیصلہ کیا ہے جس کے لیے آئی جی آفس نے سی ٹی او لاہور سمیت تمام اضلاع سے موجودہ گاڑیوں کی تفصیلات طلب کر لی ہیں۔کھٹارہ گاڑیوں اور موٹر سائیکلوں کی تفصیلات بھی طلب کی گئیں ہیں، تاکہ ان گاڑیوں کو تبدیل کرنے کے بعد پرانی گاڑیوں کی نیلامی بھی ہو سکے۔ پولیس ذرائع کا کہنا تھا کہ لاہور ٹریفک پولیس عرصہ دراز سے پرانی گاڑیوں کو ٹھیک کروانے پر ایک کروڑ روپے سے زائد رقم خرچ کر چکی ہے۔ جبکہ دوسری جانب ایک خبر کے مطابق لیسکو نے نجی و سرکاری نادہندہ محکموں اور اداروں سے بارہ ارب روپے کی وصولی کے لئے افسران و ملازمین کی ہفتہ وار چھٹی منسوخ کردی، ہفتہ کے روز تمام دفاتر صارفین کے لئے کھلے رہیں گے۔ لیسکو کے افسران و ملازمین کی ہفتہ وار چھٹی منسوخ کردی گئی ہے، کمپنی کے نجی و سرکاری نادہندگان سے ریکوری کے لئے چھٹی منسوخ کی گئی ہے، لیسکو نے نجی و سرکاری صارفین سے بلوں کی مد میں بارہ ارب روپے کی وصولی کرنی ہے۔ذرائع نے بتایا کہ کوارٹر ٹیرف ایڈجسٹمنٹ اور دیگر چارجز کیخلاف بڑے صارفین کی جانب سے مختلف عدالتوں سے رجوع کرنے کی وجہ سے ریکوری متاثر ہوئی ہے، جس پر سیکرٹری پاور ڈویژن عرفان علی خان کی ہدایات پر دفاتر کھلے رکھنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ صارفین کی بلوں کی تصحیح سمیت دیگر امور کو ہفتہ کے روز حل کروا سکیں گے۔دوسری جانب ریکوری کی وجہ سے ہفتہ وار ہونے والی کھلی کچہریوں کو بھی منسوخ کر دیا گیا ہے۔