نااہلوں کی نااہلی کی انتہا ہو گئی : پنجاب کے مختلف اضلاع کے ایم این ایز اور ایم پی ایز نے حکومت کی جانب سے ترقیاتی گرانٹ جاری ہونے کے باوجود کیا کیا ؟ ایک خبر آپ کو حیران کر دے گی

لاہور (ویب ڈیسک ) میانوالی کیلئے 4 ارب کے فنڈز کا اجرا ہوا اور استعمال صرف 10 فیصد ہوئے ،لودھراں 70 کروڑ میں سے صرف 13 فیصد ،فواد چودھری کے ضلع جہلم کے لیے ساڑھے تین ارب روپے کا پیکیج اور 50 کروڑ روپے جاری ہوئے جن میں سے 15 فیصد استعمال ہوئے ۔ لاہور کے

فنڈز کا صرف 15 فیصد استعمال ہوا اور ناقص کارکردگی میں لاہور ضلع 5ویں نمبر پر ہے ۔ ڈیرہ غازی خان کیلئے 6 ارب جاری ہوئے جن میں سے 41 فیصد خرچ ہوئے ۔گجرات کیلئے 1 ارب روپے جاری اور 27 فیصد خرچ، چکوال 15 فیصد ، راولپنڈی 14 فیصد ، پاکپتن10 فیصد ،ملتان 18 فیصداور رحیم یار خان ضلع صرف 17 فیصد فنڈز ہی استعمال کرسکا۔ صاف پانی پراجیکٹ کیلئے 8 ارب روپے رکھے گئے لیکن ان میں سے ایک روپیہ بھی خرچ نہ ہوا۔ محکمہ خزانہ کے حکام کے مطابق پنجاب میں 177 ارب روپے کے فنڈز جاری کیے جاچکے ۔ تاہم نصف مالی سال گزرنے کے باوجود ابھی صرف 34 فیصد فنڈز ہی خرچ ہوچکے ۔ پنجاب میں ترقیاتی منصوبوں کے لئے 350 ارب روپے کا ترقیاتی بجٹ رکھا گیا تھا۔