اِن ہاؤس تبدیلی کی باتیں سچ ثابت ہونے لگیں۔۔۔!!! شہباز شریف وزیر اعظم بننے کے لیے تیار ، لندن سے آنے والی خبر نے پاکستانیوں کو سرپرائز دے ڈالا

لاہور(نیوز ڈیسک ) قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف میاں شہبازشریف نے کہا ہے کہ ان ہاؤس تبدیلی سیاسی جماعتوں کا آئینی اور قانونی حق ہے، آٹے اور گندم کا بحران تشویشناک ہے، حکومت سے سوال کرتا ہوں کہ گندم کے ذخائر کہاں گئے؟ ان حالات میں ان ہاؤس تبدیلی کی بات غیرآئینی نہیں ہے۔انہوں

نے لندن میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ان ہاؤس تبدیلی سیاسی جماعتوں کا آئینی اور قانونی ، جمہوری حق ہے، جو پارلیمنٹ میں کسی بھی وقت استعمال کیا جاسکتا ہے، اس میں کوئی دورائے نہیں ہے، پاکستان کی اس وقت جو صورتحال انتہائی تشویش ناک ہے، خاص طور پر آٹے اور گندم کی قیمتیں آسمان سے باتیں کررہی ہیں، آٹے اور گندم کا بحران پیدا ہوگیا ہے۔میں حکومت سے سوال کرتا ہوں کہ گندم کے ذخائر کہاں گئے؟ کیا گندم کے ذخائر اسمگل ہوگئے؟ قوم کو کیا بتایا گیا ہے؟ آج 70 سالہ تاریخ میں آٹے کی قیمت زیادہ ہے، ان حالات میں اگر ان ہاؤس تبدیلی کی بات ہوتی ہے تو وہ غیرآئینی یا غیرقانونی نہیں ہے۔انہوں نے کہا میڈیا پر ہرپل گندم، آٹے اور روٹی کے ستائے عوام کی دہائی دے رہا ہے، وزیراعظم نے شاید اب تک ٹی وی آن نہیں کیا عمران نیازی صاحب لاو لشکر کے بغیر عام آدمی کے طورپر بازار جائیں تاکہ آٹے دال کا بھائو معلوم ہو، وفاقی اور صوبائی سطح پر حکومتی غفلت، لاپرواہی اور بدانتظامی کی سزا غریب عوام کو مل رہی ہے ۔انہوں نے کہا کہ گندم کی قلت کا ذمہ دار کون ہے، اس کا تعین کیا گیا، گندم کی فراہمی میں کوئی گڑبڑتھی تو اس کا اب تک نوٹس کیوں نہیں لیا گیا،اگر مسئلہ گندم کی فراہمی کا ہے تو فوری گندم فراہم کرکے اس مسئلے کو حل کیوں نہیں کیا گیا ۔عمران نیازی صاحب ٹویٹس کرنے کے بجائے گندم اور آٹے پر فوری اجلاس بلاتے، بتائیں ذمہ داروں کے خلاف کیا کارروائی کی بجلی، گیس، گندم، ترقیاتی کاموں سمیت ہر شعبے کی تنزلی اور قوم کی مشکلات دیکھ کر دل خون کے آنسو روتا ہے ۔انہوں نے کہا کہ نیب اور نیازی گٹھ جوڑ ہے کہ میرے اور میری بھتیجی کے خلاف من گھڑت ریفرنس دائر کیا جارہا ہے۔وزراء آج من گھڑت باتیں کررہے تھے۔نیب نے ابھی ایک لفظ نہیں بولا لیکن وزراء شور مچارہے ہیں کہ نئے ریفرنس آرہے ہیں۔نیب نیازی ناپاک گٹھ جوڑ ہے جس کا نئے من گھڑت ریفرنس دائرکرنے کے بیانات ایک ثبوت ہے۔