بریکنگ نیوز۔۔۔!!! لندن میں نواز شریف کی رہائش گاہ پر حملہ ، (ن) لیگ میں تشویش کی لہر دوڑ گئی

اسلام آباد (نیوز ڈیسک ) مسلم لیگ ن کے مرکزی رہنماء خواجہ آصف نے کہا ہے کہ گھروں پرحملوں کی روایت چلی توبند نہیں ہوگی، ہمارے قائد کے گھرپرحملہ ہوسکتا ہے توآپ کے قائد کے گھرپربھی ہوسکتا ہے، جہاں احتجاج ہوا اس کے قریب آپ کے بچے اور اہلخانہ بھی رہتے ہیں،سیاسی دشمنی کو ذاتی دشمنی میں تبدیل نہ کریں، ہم جانتے ہیں یہ کس نے کیا اور کس نے سرپرستی کی۔

انہوں نے قومی اسمبلی میں اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان ہویا لندن ہمیں سب کے گھروں کا معلوم ہے۔کل شام لندن میں نوازشریف کے بیٹے کی رہائش گاہ کے باہر احتجاجی مظاہرہ کیا گیا۔ہمارے قائد کے گھر حملہ ہوسکتا ہے تو آپ کے قائد کے گھر بھی ہوسکتا ہے۔نوازشریف یا کسی بھی سیاستدا ن کے گھر پرحملہ ہوا تو ہم ان کا پیچھا کریں گے۔جہاں احتجاج ہوا ہے اس کے قریب آپ کے بچے اور اہلخانہ بھی رہتے ہیں۔

پاکستانی سیاست میں یہ چیزیں چارپانچ سال میں متعارف کروائی گئیں۔ مخالفین کے گھروں کا تقدس پامال کرنے کی روایت ڈالی گئی ہے۔ یہ خطرناک روایت ہے۔تشدد کی لہر چل پڑی تو رکے گی نہیں، یہ سلسلہ چل پڑا توبند نہیں ہوگا۔ حکومت اپوزیشن سے دشمنی کررہی ہے۔سیاسی دشمنی کو ذاتی دشمنی میں تبدیل نہ کریں۔انہوں نے کہا کہ ایوان کے توسط سے بتانا چاہتاہوں کہ جانتے ہیں یہ کس نے کیا اور کس نے سرپرستی کی ،جن لوگوں نے پیسا لگایا، ہمیں ان کے چہروں کی شناخت ہے ہم ان کے نام بھی جانتے ہیں۔

ہم ان کے چہرے نہیں بھولیں گے۔ انہوں نے کہا کہ دشمنی ہم بھی نبھانا جانتے ہیں۔جنگ کیلئے تیار ہیں، ایسی جنگ میں سارا سسٹم لپیٹا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ الیکشن کمیشن اور دیگر معاملات پر حکومت کا ساتھ نہیں دیں گے۔کسی بھی قانون سازی کا حصہ نہیں بنیں گے۔جس طرح کا رویہ دکھایا جا رہا ہے آپ اپوزیشن سے کسی قسم کی مفاہمت نہیں چاہتے۔ انہوں نے کہا کہ حکمرانوں کی بصارت ہے نہ سماعت ہے۔ اقتدار بصارت اور قوت سماعت چھین لیتا ہے۔ جن کے پروڈکشن آرڈرجاری کیے گئے ان میں کوئی بھی اجلاس میں نہ پہنچ سکا۔