بریکنگ نیوز: نواز شریف کے جسم کی اہم ترین شریان بند۔۔۔ (ن) لیگیوں کی دوڑیں

لندن (وہب ڈیسک) مسلم لیگ نون کی ترجمان مریم اورنگزیب کا کہنا ہے کہ میاں محمد ‎نواز شریف کے دماغ کو خون پہنچانے والی شریان 88 فیصد بند ہے، ‎ڈاکٹرز نے انہیں امریکا میں علاج کی تجویز دی ہے۔ سابق وزیر اعظم اور مسلم لیگ نون کے قائد نواز شریف کی صحت سے متعلق بیان

میں ترجمان نون لیگ مریم اورنگزیب نے بتایا کہ ‎ڈاکٹروں کے مطابق کئی طبی پیچیدگیاں میاں صاحب کے لیے سنگین نتائج کی حامل ہوسکتی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ‎ڈاکٹروں نے امریکا میں ماہرین سے رجوع کرنے پر اصرار کیا ہے،جبکہ پی ای ٹی اسکین کی روشنی میں نواز شریف کی بائی آپسی کی جائے گی۔ مریم اورنگزیب نے بتایا کہ ‎پلیٹ لیٹس کے معاملے میں بھی بہتری پیدا نہیں ہوئی ہے،‎اسٹیرائڈز کی ہائی ڈوز دینے کا سلسلہ اب بھی جاری ہے۔ انہوں نے بتایا کہ ‎اسٹیرائڈز اور پلیٹ لیٹس کی ادویات سے نوازشریف کی شوگر انتہائی زیادہ ہے، ڈاکٹرز شوگر اور پلیٹ لیٹس کے توازن کو اعتدال میں لانے کی کوشش کر رہے ہیں۔دوسری جانب سابق وزیر اعظم میاں نواز شریف کے سزا یافتہ ہونے کے باوجود ’ملی بھگت‘ کرکے بیرون ملک جانے پر مشترکہ تحقیقاتی ٹیم (جے آئی ٹی) تشکیل دینے کے لیے سپریم کورٹ میں آئینی درخواست دائر کردی گئی۔ درخواست میں مؤقف اختیار کیا گیا ہے کہ نواز شریف نے دیگر ساتھیوں کے ہمراہ من گھڑت کہانی بنائی اور میڈیکل بورڈ کا ناجائز استعمال کیا۔ درخواست میں کہا گیا کہ ایسی میڈیکل کی کہانی بنائی جیسے وہ کسی لمحے خالق حقیقی سےجا ملیں گے، نواز شریف من گھڑت کہانی بنا کر سزا یافتہ ہونے کے باوجود بیرون ملک گئے تاہم جس دن سے برطانیہ پہنچے ہیں کسی اسپتال میں داخل نہیں ہوئے۔ درخواست گزار کے مطابق سوشل اور الیکٹرانک میڈیا کے دور میں جو ویڈیوز اور تصاویر سامنے آئی ہیں ان میں سابق وزیر بیمار نظر نہیں آرہے۔ درخواست میں استدعا کی گئی کہ عدالت اس من گھڑت کہانی کا کھوج لگانے کے لئے جے آئی ٹی تشکیل دے جبکہ نواز شریف کی پاکستانی میڈیکل بورڈ اور برطانیہ میں علاج کی رپورٹس طلب کی جائیں اور سابق وزیراعظم کی برطانوی رہائش گاہ کی تفصیلات بھی طلب کی جائیں۔ درخواست گزار نے دعویٰ کیا ہے کہ نواز شریف کو برطانیہ بھجوانے کے لئے من گھڑت کہانی بنانے میں ڈاکٹر عدنان اور شہباز شریف شامل ہیں۔