بریکنگ نیوز: نواز شریف باہر نہیں جائیں گے بلکہ ۔۔۔۔۔ (ن) لیگ نے حکومت کو دنگ کر ڈالنے والا سرپرائز دے دیا

لاہور (ویب ڈیسک) سابق وزیراعظم نواز شریف کا نام ای سی ایل سے نکالنے کا فیصلہ آج صبح 10 بجے ہو گا، ن لیگ نے ضمانتی بانڈز دینے سے انکار کر دیا۔ مسلم لیگ (ن) نے سابق وزیراعظم نواز شریف کا نام ای سی ایل سے نکالنے کے معاملے پر حکومتی شرائط کو مسترد کر دیا،

(ن) لیگ کی جانب سے ضمانتی بانڈز جمع کرانے سے انکار کر دیا گیا ہے ۔رہنما مسلم لیگ (ن) عطاء تارڑ کا کہنا ہے کہ سیکیورٹی بانڈز عدالتوں میں جمع کرا چکے ہیں،مزید سیکیورٹی بانڈز جمع کرانے کی ضرورت نہیں اور یہی ہمارا موقف ہے، نواز شریف کا نام ای سی ایل سے نکالنے کا فیصلہ آج صبح 10 بجے ہو گا۔ بعد ازاں وفاقی وزیر برائےقانون فروغ نسیم نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ذیلی کمیٹی نے سفارشات پر اپنا فیصلہ محفوظ کر لیا ہے ،ہماری سفارشات وفاقی کابینہ کے پاس جانی ہیں ،پہلے دن ہی کہا تھا کہ کمیٹی میرٹ پر فیصلہ کرے گی،تاہم فیصلے سنانے کے وقت کا ابھی تعین نہیں ہوسکا،ہمارا فیصلہ کسی کی رضا مندی پر منحصر نہیں ۔ وفاقی کابینہ نواز شریف کا نام ای سی ایل سے نکالنے کا حتمی فیصلہ کرے گی۔ قبل ازیں وفاقی کابینہ کی کمیٹی برائے ای سی ایل نےنواز شریف سے گارنٹی مانگی تھی ، ذیلی کمیٹی نے نواز شریف کا نام ای سی ایل سے نکالنے کی مشروط منظوری دے دی،کمیٹی نے فیصلہ کیا کہ نواز شریف کو سیکورٹی بانڈ جمع کرانے ہوں گے۔نواز شریف کا نام ای سی ایل سے مختصر مدت کے لیے نکالا جائے گا،جبکہ نواز شریف کی جائیداد کے کاغذات بھی بطور گرانٹی لینے کی تجویز پر غورکیا گیا ہے ۔شریف خاندان ضمانتی بانڈز نہ دینے پر اڑ گئے، پرویز رشید نے کہا ن لیگ زیلی کمیٹی اجلاس میں شرکت نہیں کرے گی، شہباز شریف نے اپنے بڑے بھائی میاں نواز شریف کو ڈیڑھ گھنٹے تک منایا کہ ہم ضمانتی بانڈز دے دیتے ہیں اور آپ بیرون ملک علاج کے لئے روانہ ہو جائیں جس پر سابق وزیر اعظم نے صاف انکار کر دیا۔علاوہ ازیں نواز شریف پر عائد جرمانے کی نصف رقم کے برابر سیکورٹی بانڈز لینے کی شرط بھی زیر غور ہے،نوازشریف کو وطن واپسی کی یقین دہانی اور شورٹی بانڈ بھی جمع کرانےہوں گے۔ ذیلی کمیٹی نے وکلاء سے نواز شریف کی واپسی کی تاریخ بھی مانگی تھی،کمیٹی نے وکلاء سے کہا کہ واضح جواب دیں کہ نواز شریف کب تک وطن واپس آئیں گے؟نواز شریف کی واپسی کی ضمانت کے طور پر کچھ اثاثے بھی رکھیں۔