چلو پھر ایسے تو ایسے ہی سہی ۔۔۔۔ جمعیت علماء اسلام کے استعفے کے مطالبے پر وزیراعظم عمران خان نے حیران کن جواب دے دیا

اسلام آباد(ویب ڈیسک) وزیراعظم عمران خان نے مذاکراتی کمیٹی کو اپوزیشن سے مذاکرات جاری رکھنے کی ہدایت کردی اور کہا کہ استعفیٰ کا مطالبہ غیر آئینی ہے، سنجیدہ مذاکرات کیے جائیں۔ وزیراعظم عمران خان سے حکومتی مذاکراتی کمیٹی نے ملاقات کی جس میں وفاقی وزیرداخلہ اعجاز شاہ اور بابر اعوان بھی شریک ہوئے، وزیر داخلہ

نے وزیراعظم کو حکومتی حکمت عملی اور انتظامی اقدامات سے آگاہ کیا۔ ایکسپریس کے مطابق ملاقات کے دوران حکومتی مذاکراتی کمیٹی نے وزیراعظم کو بتایا کہ احتجاج جمہوری حق ہے حکومت کو اس سے خطرہ نہیں، خطرہ ہوتا تو دھرنے والوں کو اسلام آباد نہ آنے دیا جاتا۔ ذرائع کے مطابق وزیراعظم عمران خان کی مذاکراتی کمیٹی کو اپوزیشن سے مذاکرات جاری رکھنے کی ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ استعفیٰ کا مطالبہ غیر آئینی ہے، سنجیدہ مذاکرات کیے جائیں۔ دوسری جانب ایک خبر کے مطابق نواز شریف کا برطانیہ کی بجائے امریکا سے اپنا علاج کروانے کا فیصلہ، سابق وزیراعظم ممکنہ طور پر اتوار کے روز لندن کیلئے روانہ ہوں گے، بعد ازاں وہاں سے امریکا چلے جائیں گے۔ تفصیلات کے مطابق میڈیا رپورٹس میں دعویٰ کیا جا رہا ہے کہ سابق وزیراعظم نواز شریف لندن کی بجائے امریکا سے اپنا علاج کروایا چاہتے ہیں۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق نواز شریف نے فیصلہ کیا ہے کہ وہ برطانیہ پہنچ کر زیادہ وقت قیام نہیں کریں گے اور وہاں سے امریکا چلے جائیں گے۔ نواز شریف امریکا جا کر اپنی بیماری کا علاج کروائیں گے۔ واضح رہے کہ مسلم لیگ ن کے قائد میاں نوازشریف اتوار کو خصوصی ایئرلائن پر لندن جائیں گے۔ نوازشریف کے ہمراہ اپوزیشن لیڈر شہبازشریف اور جنید صفدر بھی جائیں گے۔ ذرائع کی جانب سے بتایا گیا ہے کہ شریف فیملی کی جانب سے لندن میں 2 ڈاکٹروں سے رابطہ کیا گیا ہے۔ ہارلے اسٹریٹ کلینک میں سوموار کیلئے اپوائٹمنٹ لیا گیا ہے۔اسی طرح شریف فیملی کی نیویارک میں بھی ڈاکٹرز سے بات ہورہی ہے۔ مزید برآں سابق وزیر اعظم نوازشریف کے ذاتی معالج ڈاکٹر عدنان نے ایک بار پھر ان کی طبیعت کو تشویشناک قرار دیدیا۔