آزادی مارچ میں کالعدم تنظیموں کے پرچم لہرانے کا معاملہ۔۔۔!!!میجر جنرل آصف غفور نے ایسی بات کہہ دی کہ مولانا بھی سوچنے پر مجبور ہوگئے

راولپنڈی (نیوز ڈیسک ) میجر جنرل آصف غفور کا کہنا ہے کہ مولانا فضل الرحمان سینئر سیاستدان اور پاکستان سے محبت کرنے والے شخص ہیں، تاہم دھرنے میں کالعدم تنظیم کا پرچم لہرانے سے بین الاقوامی سطح پر دشمنوں کو پاکستان کیخلاف زہر اگلنے کا موقع ملے گا۔ تفصیلات کے مطابق پاک

فوج کے ترجمان اور شعبہ تعلقات عامہ آئی ایس پی آر کے سربراہ میجر جنرل آصف غفور کی جانب سے مولانا فضل الرحمان کے دھرنے میں کی جانے والی الزام تراشیوں اور ہرزہ سرائی پر ردعمل دیا گیا ہے۔میڈیا کو جاری کیے گئے پیغام میں ترجمان پاک فوج نے واضح کیا ہے کہ مولانا فضل الرحمان کا دھرنا ایک سیاسی معاملہ ہے اور فوج کا اس سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ جبکہ چونکہ فوج اس وقت قومی سلامتی کے معاملات میں مصروف ہے، اس لیے ملک کا دفاع اجازت نہیں دیتا کہ دھرنے میں دی جانے والی الزام تراشی کا جواب دیا جائے۔میجر جنرل آصف غفور کا مزید کہنا ہے کہ ملک میں کافی عرصے سے دھرنے ہو رہے ہیں۔2014 کے دھرنے میں بھی فوج نے جمہوری حکومت کا ساتھ دیا تھا۔ جبکہ انتخابات میں حکومت کی درخواست پر ہی فوج سیکورٹی کے فرائض انجام دیتی ہے۔ خیال رہے کہ مولانا فضل الرحمان کی جانب سے دھرنے سے پہلے خطاب میں اداروں کو مورد الزام ٹھہرایا گیا تھا ، جس کے بعد دی جی آئی ایس پی آر کی جانب سے واضح میں کہا گیا تھا کہ دھرنا مسائل کا حل نہیں ہے، اگر آپ کو اداروں کے خلاف تحفظات ہیں تو پھر اداروں میں جائیں یوں سڑکوں پر آ کر تقریریں کرنے سے کچھ حاصل نہیں ہوگا۔ جبکہ مولانا کے اس بیان کے بعد مولانا اور دھرنے میں بھی کافی تبدیلی دیکھنے میں نظر آئی کیونکہ سینئر صحافیوں کا اس حوالے سے کہنا ہے کہ مولانا کے اندر جو وائرس تھا وہ ڈیلیٹ کر دیا گیا اور انکا سافٹ وئیر تبدیل کر دیا گیا ہے یہی وجہ ہے کہ اب وہ پاک فوج کی قربانیوں کا بھی ذکر کر رہے ہیں اور انکی ٹون اور لہجہ بھی تبدیل ہوچکا ہے۔