دوبارہ وزیراعظم بننے پر عمران خان کی جسٹن ٹروڈو کو مبارکباد۔۔۔!!! ساتھ ہی کینیڈین وزیر اعظم کو ایسی دعوت دے دی کہ وہ بھی انکار نہیں کر سکیں گے

اسلام آباد (نیوز ڈیسک) دوسری مرتبہ کینیڈ ا کے ویزر منتخب ہونے پر وزیر اعظم عمران خان کی جانب سے کینڈین نو منتخب وزیر اعظم جسٹس ٹروڈو کو کینیڈا کا دوبارہ وزیر اعظم بننے پر مبارکباد دی گئی ہے۔تفصیلات کے مطابق دوبارہ منتخب ہونے پر وزیر اعظم عمران خان نے کینیڈین وزیر اعظم

جسٹس ٹروڈو سے رابطہ کیا ہےاور مل کر ساتھ چلنے اور کام کرنے کی دعوت بھی دے دی ہے۔

خیال رہے کہ کینیڈا کی حکمراں جماعت لبرل پارٹی نے عام انتخابات میں ایک مرتبہ پھر نمایاں پوزیشن حاصل کر کے میدان مار لیا ہے اور وہ اتحادیوں کے ساتھ مل کر نئی حکومت کی کی پوزیشن میں آگئی ہے. عالمی نشریاتی ادارے کے مطابق کینیڈا میں عام انتخابات کے لیے گزشتہ روزہونے والی ووٹنگ کے بعد نتائج کی آمد کا سلسلہ جاری ہے اور اب تک حکمراں جماعت لبرل پارٹی سب سے زیادہ 156 نشستوں کے ساتھ سرفہرست ہے. ابتدائی نتائج کے مطابق علیحدگی پسند جماعت بلاک کیوبیکوز حیران کن طور پر 33 نشستیں حاصل کرنے میں کامیاب رہی ہے جب کہ کنزرویٹو پارٹی کو 12، نیو ڈیمو کریٹک پارٹی چار اور گرین پارٹی ایک نشست حاصل کرسکی‘اکثریتی حکومت بنانے کے لیے کسی بھی جماعت کو 338 کے ایوان میں 170 نشستیں درکار ہیں. حکومت بنانے اور نئی قانون سازی کے لیے جسٹن ٹروڈو کو بائیں بازو کی حزب اختلاف کی جماعتوں پر انحصار کرنا ہوگا‘امریکہ کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے جسٹن ٹروڈو کو مبارکباد دیتے ہوئے اپنے ایک ٹوئٹ میں کہا کہ جسٹس ٹروڈو کو زبردست اور سخت مقابلے کے بعد کامیابی پر مبارکباد پیش کرتا ہوں‘ آپ نے کینیڈا کی خدمت کی اور میں دونوں ملکوں کی ترقی کے لیے آپ کے ساتھ کام کرنے کے لیے تیار ہوں. کوئنز یونیورسٹی میں شعبہ سیاسیات کے پروفیسر جوناتھن روز کا کہنا ہے کہ نیو ڈیمو کریٹک پارٹی کی کارکردگی مایوس کن رہی اور بلاک کیوبیکوز نے انتخابات میں سب کو حیران کردیا ہے.انہوں نے کہا کہ میرے خیال میں بلاک کیوبیکوز کی 20 نشستوں پر کامیابی کا امکان تھا لیکن اس نے 30 سے زائد نشستیں حاصل کر کے حیران کردیا ہے‘پروفیسر جوناتھن کا کہنا ہے کہ اکثریتی جماعت کے مقابلے میں اتحادی حکومت غیرمستحکم رہتی ہے‘جسٹس ٹروڈو اور ان کی جماعت لبرل پارٹی کو بلاک کیوبیکوز کی ضرورت نہیں ہے. یاد رہے کہ وزیر اعظم جسٹن ٹروڈو کو انتخابات سے چند روز ایک پرانی تصویر پر شدید تنقید کا سامنا تھا جس میں وہ سیاہ دکھائی دے رہے تھے اور اس پر انہیں معافی بھی مانگنا پڑی جب کہ ناقدین کینیڈا کی بڑی تعمیری کمپنیوں میں کرپشن کی روک تھام کے لیے کیے گئے اقدامات پر بھی انہیں تنقید کا نشانہ بنا رہے تھے۔