بینکنگ کورٹ کیس: عدالت نے انور مجید اور عبدالغنی مجید کے حوالے سے حیرت انگیز حکم جاری کر دیا

کراچی (ویب ڈیسک) بینکنگ کورٹ نے اومنی گروپ کی شوگر ملز سے اربوں روپے کی چینی غائب ہونے سے متعلق انور مجید، عبدالغنی مجید کے پروڈکشن آرڈرز جاری کردیئے۔ عدالت نے محکمہ داخلہ اور اڈیالہ جیل کو ملزمان پیش کرنے کا حکم دیدیا۔ بینکنگ کورٹ کے روبرو اومنی گروپ کی شوگر ملز سے اربوں روپے

کی چینی غائب ہونے سے متعلق سمٹ بینک، سندھ بینک اور نیشنل بینک کی کرمنل کمپلینٹس کی سماعت ہوئی۔ اومنی گروپ کے سربراہ انور مجید اور عبدالغنی مجید کو اڈیالہ جیل سے نہیں لایا گیا۔ انور مجید کے بیٹے اور اہلخانہ میں سے بھی کوئی پیش نہ ہوا۔ عدالت نے انور مجید، عبدالغنی مجید کے پروڈکشن آرڈرز جاری کردیئے۔ عدالت نے محکمہ داخلہ اور اڈیالہ جیل کو ملزمان پیش کرنے اور علی کمال مجید، مصطفی ذوالقرنین مجید کو پیش ہونے کا حکم دیدیا۔ دوسری جانب ایک خبر کے مطابق نیب اور برطانوی نیشنل کرائم ایجنسی نے بد عنوانی کے مقدمات میں تعاون بڑھانے کا فیصلہ کر لیاہے اور ایک مشترکہ کارروائی کے دوران ملزم نثار افضل کے اہل خانہ سے 30 کروڑ روپے کی ریکوری بھی کر لی گئی ہے ۔ تفصیلات کے مطابق برطانوی نیشنل کرائم ایجنسی اور نیب نے مشترکہ کارروائی کی ہے جس دوران فراڈ کیس میں ملوث ملزم نثار افضل کے اہل خانہ سے 30 کروڑ روپے کی ریکوری کی گئی ہے ، ملزم کیخلاف نیب راولپنڈی میں انویسٹی گیشن چل رہی ہے ، ملزم نثار افضل نیب کے ایک اور فراڈ کیس میں بھی سزا یافتہ ہے ، برطانیہ کی نیشنل کرائم ایجنسی نے نیب راولپنڈی سے رابطہ کرتے ہوئے معاملہ اٹھایا ، برطانوی ٹیم پاکستان کے متعدد دورے کر چکی ہے ۔ نیشنل کرائم ایجنسی نے مشترکہ طور پر کارروائی پر نیب چیئرمین اور ڈی جی نیب کاخط لکھ کر شکریہ ادا کیاہے اور مستقبل میں کرپشن اور منی لانڈرنگ کے خاتمے کیلئے تعاون بڑھانے پر اتفاق کیا ہے جبکہ پاکستان کے کیسز میں بھی مکمل تعاون کی یقین دہانی کروائی گئی ہے ۔ملزم نثار افضل پر برطانیہ میں فراڈکا الزام ہے ۔