’’گھر کے کام زیادہ ضروری ہیں تو نوکری چھوڑ دو۔۔۔‘‘وزیراعظم عمران خان نے کونسے بڑے وزرا کی آج کلاس لے لی اور کیوں؟بڑی خبر

اسلام آباد (ویب ڈیسک)وزیراعظم عمران خان نے قائمہ کمیٹیوں میں وزراء اور سیکرٹریز کی غیر حاضری پر اظہار برہمی کرتے ہوئے ہدایت جاری کی ہے کہ وزراء اور وزارتوں کے اعلی حکام ،قائمہ کمیٹیوں میں اپنی شرکت یقینی بنائیں۔تفصیلات کے مطابق وزیراعظم عمران خان قائمہ کمیٹیوں میں وزراء اور سیکرٹریز کی غیر حاضری پر برہمی کا

اظہار کرتے ہوئے وزراء اور وزارت کے اعلی حکام قائمہ کمیٹیوں میں شرکت یقینی بنانے کی ہدایت کردی ہے۔وزیراعظم عمران خان نے کہا قانون سازی میں قائمہ کمیٹیوں کا مرکزی کردار ہے، میرے علم میں لایا گیا ہے کہ وزراء قائمہ کمیٹیوں میں نہیں جاتے۔ متعلقہ وزیر یا سیکرٹری کی عدم موجودگی میں اہم قانون سازی متاثر ہوتی ہے، وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ متعلقہ وزیر یا سیکرٹری کی عدم موجودگی میں اہم قانون سازی متاثر ہوتی ہے، نظام کو بہتر بنانے کے لیے پارلیمنٹ اور اسکی کمیٹیوں کو مضبوط بنانے کی ضرورت ہے۔دوسری جانب خیبرپختونخواکابینہ کا ہنگامی اجلاس طلب کرلیا ہے ، اجلاس کی صدارت وزیر اعظم عمران خان کریں گے، اجلاس میں صوبائی کابینہ کی کارکردگی کا جائزہ لیا جائے گا۔ذرائع کا کہنا ہے کہ اجلاس میں وزرااور مشیروں کے محکموں میں تبدیلی کا امکان ہے۔ جبکہ دوسری جانب ایک خبر کے مطابق وزیر اعظم عمران خان نے واضح کیا ہے کہ قصور میں عوامی مفاد کیلئے کام نہ کرنے والوں کے خلاف کارروائی کی جائے گی۔وزیر اعظم عمران خان نے اپنے بیان میں کہا کہ قصور کے واقعات پر سب کا احتساب کیا جائے گا۔ وہ تمام لوگ جو عام آدمی کے مفاد میں کام نہیں کر رہے ان کے خلاف کارروائی کی جائے گی۔ انہوں نے پنجاب پولیس اور حکومت کی جانب سے اٹھائے جانے والے اقدامات کی تفصیل بھی بتائی۔وزیر اعظم نے بتایا کہ چونیاں میں پیش آنے والے واقعات پر ڈی پی او قصور کو عہدے سے ہٹایا جاچکا ہے جبکہ ایس پی انویسٹی گیشن قصور کو سرینڈر کرکے اس کے خلاف چارج شیٹ پیش کردی گئی ہے۔ ڈی ایس پی اور ایس ایچ کو معطل کردیا گیا ہے جبکہ قصور کی پولیس میں بڑی تبدیلی پر غور کیا جا رہا ہے۔ وزیر اعظم نے بتایا کہ واقعات کی تحقیقات کیلئے ایڈیشنل آئی جی کی سربراہی میں تحقیقات جاری ہیں۔خیال رہے کہ قصور کی تحصیل چونیاں سے گزشتہ دنوں 4 بچے لاپتا ہوئے تھے جن میں سے ایک بچے کی لاش اور 2 کے ڈھانچے برآمد ہوئے تھے۔