’’خان صاحب ہم آپ کی عزت کرتے ہیں لیکن جب تک آپ اپنے ملک میں اس چیز کا خاتمہ نہیں کر لیتے ہماری طرف سے معذرت ہے ۔۔۔‘‘ ڈونلڈ ٹرمپ نے پاکستان کو تاریخ کا سب سے بڑا جھٹکا دے دیا

واشنگٹن(ویب ڈیسک) امریکہ نے پاکستان سے ایک بار پھر ڈومور کا مطالبہ کر دیا ہے۔امریکہ صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا ہے کہ ان کی جانب سے پاکستان کی سیکیورٹی معاونت کے لیے ایک ارب 30 کروڑ ڈالر کی امداد روکے جانے کے بعد واشنگٹن اور اسلام آباد کے تعلقات میں بہتری آئی ہے۔ انہوں نے کہا ہے

کہ جب تک پاکستان اپنی سرزمین پر دہشت گردوں کے تمام مبینہ محفوظ ٹھکانوں کو ختم نہیں کر دیتا تب تک ایک ارب 30 کروڑ ڈالر کی امداد معطل رہے گی۔خیال رہے کہ سال 2018 کی اپنی پہلی ٹوئٹ میں امریکی صدر نے پاکستان پر الزام لگاتے ہوئے کہا تھا کہ پاکستان خطے سے دہشت گردی کے خاتمے کے امریکی مطالبے کو مسلسل نظر انداز کرتا آرہا ہے لیکن اس کے باوجود پچھلی امریکی حکومتوں نے ‘بیوقوفانہ’ طور پر اسلام آباد کو 15 سالوں میں 33 ارب ڈالر سے زائد دیئے لیکن اب پاکستان کی امداد معطل کی جارہی ہے۔اب انہوں نے امداد بحال کرنے کے لیے بڑی شرط رکھ دی ہے۔ امریکہ نے پاکستان سے ایک بار پھر ڈومور کا مطالبہ کر دیا ہے۔ امریکی صدر ڈونلڈٹرمپ نے کہاہے کہ مقبوضہ کشمیر کی صورتحال سے متعلق وزیراعظم عمران خان اور بھارتی وزیراعظم نریندر مودی سے ٹیلیفونک بات چیت مفید رہی ہے ،امریکی ٹی وی کے مطابق ڈونلڈ ٹرمپ نے ایک ٹوئٹ میں کہا کہ انہوں نے دونوں ممالک کے وزرائے اعظم سے تجارت اور اسٹریٹجک شراکت داری سمیت مقبوضہ کشمیر سے متعلق بات چیت کی۔امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپنے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹویٹر پر ٹویٹ کرتے ہوئے کہا ہے کہ میری دو اچھے دوستوں بھارتی وزیراعظم نریندر مودی اور پاکستان کے وزیراعظم عمران خان سے تجارت ، اسٹریٹجک شراکت داری اور خاص طور پر ہندوستان اور پاکستان کے درمیان کشمیر میں تناؤ کو کم کرنے کے لئے کام کرنے کے بارے میں بات ہوئی ۔ یہایک سخت صورتحال ہے ، لیکن اچھی گفتگو رہی۔