حکومت کے ساتھ غداری۔۔۔ اچانک کن اراکین اسمبلی نے وزیر اعظم عمران خان کی بجائے (ن) لیگ کا ساتھ دینے کا اعلان کر دیا ؟ پاکستان کا سیاسی نقشہ بدل کر رہ گیا

لاہور (نیوز ڈیسک ) حکمران جماعت کو ایک بار (ن) لیگی غداروں نے دھوکہ دے دیا، پہلے عمران خان سے ملاقات میں عمران خان اور حکومت کا ساتھ دینے کی مکمل یقین دہانی کراتے رہے اور اب اچان اپنی وفاداریاں مسلم لیگ ن کے ساتھ ہی رکھنے کا اعلان کر دیا، حکمران جماعت کا

ن لیگ میں فاروڈ بلاک بنانے کا خواب بھی چکنا چور ہوگیا ہے۔ لاہور میں منعقدہ اجلاس کے دوران اراکین اسمبلی نے قیادت کو یقین دلایا کہ وہ پارٹی کے ساتھ کھڑے ہیں اورپارٹی کے ساتھ رہیں گے۔ نجی ٹی وی چینل کی رپورٹ میں فراہم کردہ تفصیلات کے مطابق مسلم لیگ ن کا اعلیٰ سطح کا اجلاس ماڈل ٹاؤن میں سابق سپیکر پنجاب اسمبلی رانا محمد اقبال کی زیر صدارت ہوا۔اجلاس میں ناراض ارکان اسمبلی بھی شریک ہوئے، جن میں جلیل شرقپوری، مولانا غیاث الدین، نشاط احمد ڈاہا شامل تھے۔ اراکین اسمبلی نے وزیر اعظم عمران خان سے ملاقات کی وضاحت پیش کی مگر ساتھ ہی یہ بھی یقین دہانی کرائی کہ وہ پارٹی کے ساتھ کھڑے ہیں اورپارٹی کے ساتھ رہیں گے۔اس موقع پر اراکین اسمبلی نے وزیر اعظم سے ملاقات سے پہلے پارٹی کو اعتماد میں نہ لینے پر غلطی کااعتراف کرلیا۔اراکین اسمبلی نے کہا پہلے بھی پارٹی کے ساتھ تھے اور اب بھی ساتھ کھڑے ہیں، پارٹی میں فارورڈ بلاک کا سوچ بھی نہیں سکتے ،ہمارے حلقوں میں پی ٹی آئی کے ارکان مشکلات پیدا کررہے تھے جن کے ازالے کیلئے وزیر اعظم سے ملاقات کی۔مولانا غیاث الدین نے کہا عمران خان بھارت کے وزیر اعظم نہیں کہ ان پر ملاقات کی پابندی ہو ،ان سے حلقے کے مسائل کے حل کیلئے ملے جس کے ازالے کی یقین دہانی کرائی گئی ۔ وضاحت کے بعد میاں مجتبیٰ شجا ع الرحمن کا کہنا تھا کہ وہ وضاحت سے مطمئن ہیں جبکہ خلیل طاہر سندھو نے بتایا کہ ارکان نے کچھ کاموں کے سلسلے میں وزیر اعظم سے ملاقات کی۔