جج ارشد ملک کو ہٹانے کا معاملہ ۔۔۔۔۔۔ تحریک انصاف کا ناقابل یقین موقف سامنے آ گیا

اسلام آباد (ویب ڈیسک )وفاقی وزیر برائے قانون فروغ نسیم نے کہا ہے کہ وزارت قانون کی جانب سے احتساب عدالت کے جج ارشد ملک کو ذمہ داریوں سے روک دیا گیاہے اور انہیں وزارت کو رپورٹ کرنے کہ ہدایت کر دی ہے, ہم قانون اورانصاف کےساتھ کھڑے ہیں، عدالتوں کودباومیں لانے کی اجازت نہیں

دیں گے ۔پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے فروغ نسیم کا کہنا تھا کہ وزارت قانون نے جج ارشد ملک کو کام سے روک دیاہے، جج ارشد ملک کووزارت قانون رپورٹ کر نے کا کہا گیا ہے، جج ارشد ملک کومبینہ ویڈیو اور پریس ریلیزکی بنیاد پرکام سے روکا گیا ۔ ان کا کہنا تھا کہ جج ارشد ملک کاکہناہے انہوں نے غیرجانبدارانہ فیصلہ کیا، ایک کیس میں نوازشریف کوبری کیا گیا، دباؤ ہوتا تو نوا زشریف کودونوں کیسز میں سزاہوتی، سماعت کے دوران جج پردباو ڈالنے کی سزاقانون میں موجودہے، ہم قانون اورانصاف کےساتھ کھڑے ہیں، عدالتوں کودباومیں لانے کی اجازت نہیں دیں گے۔ جج ارشد ملک نے حلف نامے میں کہا کہ نواز شریف کے خلاف فیصلہ میرٹ پر دیا جبکہ بیان حلفی میں ارشد ملک نے کہا کہ رشوت دینے کی کوشش کی گئی۔