عوام کو شہباز شریف کی یاد ستانے لگی ۔۔۔ روٹی اور نان مہنگا ہونے کی خبریں ، مگر سابق وزیراعلیٰ کس طرح عوام کو سستی روٹی فراہم کرتے رہے ؟ جانیے

لاہور(ویب ڈیسک) وزیر اعظم عمران خان کی ہدایت پر وفاقی حکومت نے چاروں صوبوں بالخصوص پنجاب میں گزشتہ 10 برس میں آٹے اور سستی روٹی اسکیم پر دی گئی سبسڈی اور سرکاری گندم خریداری کے لیے گئے قرضوں کی تحقیقات شروع کر دی۔ گزشتہ 10 برس میں گندم اور آٹے پر سب سے زیادہ سبسڈی

میاں شہباز شریف کی وزارت اعلیٰ کے دور میں دی گئی جب کہ سرکاری گندم خریداری کے لیے ریکارڈ تعداد میں قرضے بھی میاں شہباز شریف کے دور حکومت میں بنکوں سے مختلف مارک اپ ریٹس پر حاصل کیے گئے ۔ایکسپریس کے مطابق خصوصی کمیشن نے چاروں صوبوں سے گزشتہ دس برس2008 سے 2018 تک گندم خریدنے کے لیے گئے قرضوں ، آٹے پر دی گئی گئی سبسڈی کی مکمل تفصیلات طلب کی ہیں ،چاروں صوبوں کے فوڈ حکام آج یہ تفصیلات کمیشن کے سامنے پیش کریں گے۔ ذرائع کے مطابق ان دس سالوں کے دوران گندم خریدنے کیلئے سب سے زیادہ قرضہ بھی شہباز شریف حکومت نے حاصل کیا جبکہ سب سے زیادہ سبسڈی بھی شہباز حکومت نے دی جس میں متنازع سستی روٹی اسکیم کے اربوں روپے بھی شامل ہیں۔ شہباز حکومت نے آٹے اور روٹی پر سبسڈی کی مد میں محکمہ خوراک کو 239 ارب روپے کے واجبات بھی ادا نہیں کیے اور یوں تمام مالی بوجھ محکمہ خوراک پر ڈال دیا گیا جو آج بھی موجود ہے۔محکمہ خوراک پنجاب اس وقت بنکوں سے لئے گئے قرضوں کی مد میں 428 ارب روپے کا مقروض ہے جن میں سے108 ارب روپے موجودہ تحریک انصاف کی حکومت نے گندم خریدنے کے لیے قرضہ حاصل کیا ہے۔ شہباز دور حکومت میں وزیر خوراک بلال یٰسین نے کہا کہ میاں شہباز شریف نے دس سالہ دور حکومت میں عوام کو ریلیف دینے کے لئے سبسڈی کا تمام بوجھ برداشت کیا اور ہمارے دور میں آٹے کی قیمت میں اضافہ نہیں کیا گیا، سستی روٹی اسکیم بھی عوامی مفاد میں شروع کی گئی تھی۔