عمران خان کی مقبولیت کم ہو گئی ہے اور اسکی وجہ یہ ہے کہ ۔۔۔۔ وفاقی وزیر تعلیم شفقت محمود نے نیا شوشا چھوڑ دیا

کراچی (ویب ڈیسک) وفاقی وزیر تعلیم شفقت محمود نے کہا ہے کہ عمران خان کی مقبولیت کم ہونے کی وجہ معاشی حالات ہیں، ن لیگ جج ارشد ملک کی ویڈیو عدالت کے سامنے پیش کرے، وزیراعظم پاکستان کو دورئہ امریکا کی دعوت ملی ہے اور وہ امریکا جارہے ہیں، وزیراعظم امریکا میں پاکستانی سفیر کے

گھر پر قیام کریں گے، پارلیمانی نظام کو اپنے گناہ پر پردہ ڈالنے اور خود کو سہولتیں دینے کیلئے استعمال کرنا زیادتی ہے، سندھ اسمبلی کا اجلاس ساٹھ دن صرف اس لئے چلتا رہا کہ اسپیکر کو جیل نہ جانا پڑے۔وہ جیو کے پروگرام ”کیپٹل ٹاک“ میں میزبان حامد میر سے گفتگو کررہے تھے۔ پروگرام میں پیپلز پارٹی کی رہنما سینیٹر سسی پلیجو اور ن لیگ کے رہنما محسن شاہنواز رانجھا بھی شریک تھے۔محسن شاہنواز رانجھا نے کہا کہ حکومت نے آئی ایم ایف زدہ بجٹ واپس نہ لیا تو تاجروں کی ہڑتال دو مہینے کی ہوگی، جج ارشد ملک کی ویڈیو کے بعد ادارے کی ساکھ پر سوالیہ نشان کھڑا ہوگیا ہے ،ہمیں امید ہے اعلیٰ عدلیہ اس معاملہ کا نوٹس لے گی، عدلیہ خود اس کا نوٹس نہیں لے گی تو ہم عدالت میں جائیں گے۔سینیٹر سسی پلیجونے کہا کہ حکومت آصف زرداری کے پروڈکشن آرڈر سے بھی خوفزدہ ہے،حکومت من پسند احتساب کررہی ہے، حکومت سے وابستہ لوگ کیسوں کے باوجود وزارتیں انجوائے کررہے ہیں۔وفاقی وزیر تعلیم شفقت محمود نے کہا کہ عمران خان کی مقبولیت کم ہوئی ہے تو اس کی بنیادی وجہ معاشی حالات ہیں، سروے کے مطابق عمران خان کی مقبولیت میں فرق پڑا ہے لیکن اس کے باوجود وہ مقبول ترین لیڈر ہیں، گیلپ سروے میں لوگوں کی اکثریت نے دوبارہ الیکشن میں بھی تحریک انصاف کو ووٹ دینے کا کہا ہے اس سے اپوزیشن کے سلیکٹو وزیراعظم کے بیانیہ کی نفی ہوتی ہے، احتساب کے عمل کو عوام کی اکثریت قبول کررہی ہے، ہماری حکومت دس ماہ میں پچھلی حکومتوں کا لیا گیا

آٹھ ارب ڈالر قرضہ اتار چکی ہے، پی ٹی آئی حکومت نے مجبوری کے عالم میں مشکل فیصلے کیے ہیں۔شفقت محمود کا کہنا تھا کہ ن لیگ جج ارشد ملک کی ویڈیو لے کر عدالت میں جائے اور نواز شریف کی رہائی کیلئے اپیل کرے، ن لیگ جھوٹ بول رہی ہے یا ان کی خواہش ہے کہ نواز شریف جیل میں ہی رہیں، پاکستان دنیا کے ان ممالک میں شامل ہے جہاں سب سے کم ٹیکس دیا جاتا ہے، ٹیکس نیٹ بہتر کیے بغیر ملک کا مستقبل روشن نہیں ہوسکتا ،پاکستان نے تیرہ آئی ایم ایف پروگرام کیے لیکن کسی پروگرام پر مکمل عملدرآمد نہیں کیا، جو لوگ آمدنی کے باوجود ٹیکس نہیں دیتے انہیں ٹیکس دینا پڑے گا۔شفقت محمود نے کہا کہ پاکستان امریکا کے ساتھ اچھے تعلقات کا خواہاں ہے، وزیراعظم پاکستان کو دورئہ امریکا کی دعوت ملی ہے اور وہ امریکا جارہے ہیں، وزیراعظم امریکا میں پاکستانی سفیر کے گھر پر قیام کریں گے،آصف زرداری نے دورِ صدارت میں 134دورے کیے جس پر ایک ارب 42کروڑ روپے خرچ ہوئے، ان دوروں میں سے 48دورے نجی نوعیت کے تھے، نواز شریف نے چار سالہ دورِ حکومت میں 92دورے کیے جن پر ایک ارب 82کروڑ روپے خرچ کیے، نواز شریف نے ڈیکلیئر کیا کہ ان کے 45دورے پرائیویٹ تھے ۔ شفقت محمود کا کہنا تھا کہ انڈیا نے ورلڈکپ میں پاکستان کو باہر رکھنے کیلئے ہر قسم کا تماشا کیا آج خود ورلڈکپ سے باہر ہوگیا، ن لیگ اور پیپلز پارٹی بھی ہر قسم کی چالاکی کے باوجود پی ٹی آئی سے الیکشن ہار گئے،

منڈی بہاء الدین میں مریم نواز کے جلسہ گاہ میں بارش کی وجہ سے پانی تھا، اپوزیشن شوق سے جلسے کرے ہمیں کوئی پرابلم نہیں ہے، ن لیگ کی مہربانیوں سے مجھ پر ابھی بھی دہشتگردی اور قتل کا مقدمہ چل رہا ہے۔ شفقت محمود نے کہا کہ پارلیمنٹ کی قائمہ کمیٹیوں کے اجلاسوں کابہت زیادہ خرچہ ہوتا ہے، پارلیمانی نظام کو اپنے گناہ پر پردہ ڈالنے اور خود کو سہولتیں دینے کیلئے استعمال کرنا زیادتی ہے، سندھ اسمبلی کا اجلاس ساٹھ دن صرف اس لئے چلتا رہا کہ اسپیکر کو جیل نہ جانا پڑے، حماد اظہر پہلے ریونیو کے وزیرمملکت تھے جبکہ حفیظ شیخ ریونیو کے مکمل وزیر تھے، ریونیو ڈپارٹمنٹ حفیظ شیخ کی نگرانی میں کام کررہا تھا، حماد اظہر مکمل وزیر بنے تو وزارت اقتصادی امور میں آگئے ہیں جبکہ ایف بی آر کا چارج بدستور حفیظ شیخ کے پاس رہے گا۔ ن لیگ کے رہنما محسن شاہنواز رانجھا نے کہا کہ عوامی سرویز پر یقین نہیں رکھتا ہوں، ن لیگ کے امیدواروں نے نارمل حالات میں الیکشن نہیں لڑے ہیں، حکومت نے آئی ایم ایف زدہ بجٹ واپس نہ لیا تو تاجروں کی ہڑتال دو مہینے کی ہوگی، حکومت نے 70فیصد بلاواسطہ ٹیکسیشن کی ہے اس کا مطلب ہے ایف بی آر کا سسٹم کام نہیں کررہا ہے۔محسن شاہنواز رانجھا کا کہنا تھا کہ جج ارشد ملک کی ویڈیو کے بعد ادارے کی ساکھ پر سوالیہ نشان کھڑا ہوگیا ہے ،ہمیں امید ہے اعلیٰ عدلیہ اس معاملہ کا نوٹس لے گی، عدلیہ خود اس کا نوٹس نہیں لے گی تو ہم عدالت میں جائیں گے، احتساب عدالت کے جج کو رشوت کی پیشکش اور دھمکیاں دی جارہی تھیں تو سپریم کورٹ کے سپروائزری جج کو کیوں نہیں آگاہ کیا۔محسن شاہنواز رانجھا نے کہا کہ حکومت احتجاج برداشت نہیں کرسکتی ہے، منڈی بہاء الدین میں مریم نواز کے جلسے کو روکنے کیلئے گراؤنڈ کو سیل کردیا گیا، پانی چھوڑا گیا اور شہر کی بجلی بند کردی گئی، ہمارے چار پانچ سو لوگوں کو گرفتار کیا گیا، وہاں ایک شام پہلے ہلکی سی بارش ہوئی تھی اتنی نہیں تھی کہ پانی جمع ہوجاتا۔پیپلز پارٹی کی رہنما سینیٹر سسی پلیجونے کہا کہ عوامی سروے رپورٹوں پر سوالیہ نشان ہوتے ہیں، عمران خا ن کی مقبولیت سروے میں بتائے گئے اعداد و شمار سے کہیں زیادہ کم ہوئی ہے، مہنگائی سے لے کر آزادیٴ اظہار پر پابندی تک صورتحال خراب ہے، حکومت من پسند احتساب کررہی ہے، حکومت سے وابستہ لوگ کیسوں کے باوجود وزارتیں انجوائے کررہے ہیں، بجٹ کے بعد لوگ فرسٹریشن کا شکار ہو کر باہر نکل رہے ہیں۔ سسی پلیجو کا کہنا تھا کہ پی پی حکومت میں ملک سے دہشتگردی کا دھبہ ہٹانے کیلئے بیرون ملک کے دورے کیے گئے، پاکستان کا پراگریسو چہرہ دنیا کو دکھانے کیلئے لابنگ کی ضرورت تھی، اپوزیشن میں شامل ہر جماعت کا اپنا منشور ہے، مشترکہ اپوزیشن کی حکمت عملی پرسوں تک مزید واضح ہوجائے گی، حکومت آصف زرداری کے پروڈکشن آرڈر سے بھی خوفزدہ ہے۔ (ش س م)