’’ پہلی بار پتہ چلا کہ ۔۔۔‘‘ رانا ثناء اللہ کی گرفتاری پر سہیل وڑائچ نے ایسا انکشاف کر دیا کہ پاکستانی ہکا بکا رہ گئے

اسلام آباد (نیوز ڈیسک ) تجزیہ کار سہیل وڑائچ نے کہاہے کہ راناثنا اللہ کوگرفتار کرنے والوں کے پاس کو جواز نہیں ہوگا ، یہ بات پہلی بار پتہ چلی ہے کہ راناثنا ءاللہ اے این ایف کوبھی مطلوب تھے ۔جیونیوز کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے سہیل وڑائچ نے کا کہ رانا ثناءاللہ کی

گرفتاری سے سیاسی ماحول اور مکدر ہوگا اور یہ تاثر جائیگا کہ جو گرفتاریاں ہورہی ہیں ، اس کامقصد سیاسی ہے اور اپوزیشن یہ سمجھے گی کہ اس کو دیوار کے ساتھ لگایا جارہاہے ۔ انہوں نے کہا کہ اپوزیشن جتنی بھی کمزور ہو لیکن اس طرح کے اقداما ت سے اس کو مشتعل کیا جارہاہے ، یہ نظام کیلئے اچھا نہیں ہے اور مستقبل کے لئے بھی اچھا نہیں ہے ، اس سے تلخیاں بڑھتی ہیں ، بہتری یہی ہے کہ نظام کوچلایا جائے ۔ انہوں نے کہا کہ رانا ثناءاللہ پر اچانک مقدمہ ڈال دیا گیاہے کہ جس کا کبھی سنا بھی نہیں تھا کہ وہ اے این ایف کو بھی مطلوب ہیں۔سہیل وڑائچ نے کہا کہ رانا ثنا ءاللہ کوگرفتار کرنے والوں کے پاس کوئی جواز نہیں ہوگا ۔دوسری جانب حامد میر نے کہا کہ رکن قومی اسمبلی کو گرفتار کرنے سے پہلے سپیکر قومی اسمبلی کوبتانا پڑتا ہے لیکن رانا ثنا ءاللہ کوافراتفری میں گرفتار کیا گیا ہے ، رانا ثنا ءاللہ تین چار ہفتے سے مجھ سے جب بھی ملتے تھے یہ کہتے تھے کہ مجھے عنقریب گرفتار کرلیا جائیگا جب میں ان سے پوچھتا کہ آپ کو کس جرم میں گرفتار کیا جائیگا تو وہ کہتے کہ جرم ابھی تلاش کیا جارہاہے ۔ انہوں نے کہا کہ اے این ایف کو پہلے بھی سیاسی مقدمات میں استعمال کیا جاتا رہاہے ، اے این ایف کو ناصرف سیاستدانوں کے خلاف استعمال کیا جاتاہے بلکہ شہادتیوں کو بھی گرفتار کیا جاتا ہے ۔ حامد میر کا کہنا تھا کہ وزیر اعظم کے ساتھ ملاقات کرنیوالے گوجرانوالہ کے رکن اسمبلی کے گھر ہونیوالے واقعہ پر حکومتی شخصیات کی جانب سے کہا جار ہا تھا کہ اس واقعہ کے پیچھے بھی رانا ثنا ءاللہ کا ہاتھ ہے ۔ انہوں نے کہا کہ رانا ثنا ءاللہ کہ پہلی بار گرفتار نہیں کیا گیا بلکہ اس سے قبل بھی کئی مرتبہ گرفتار کیا گیا ہے لیکن رانا ثنا ءاللہ کو گرفتار کرنیوالی حکومت کو نقصان زیادہ اور فائدہ کم ہوا ہے ۔ ان کا کہنا تھا کہ رانا ثناءاللہ کی گرفتاری کی اے این ایف کی جانب سے کوئی بھی تو جیح پیش کی جائے لیکن عوامی سطح پر ان کی گرفتار ی کو سیاسی سطح پر ہی لیا جائیگا ۔