ڈالرکی قیمت میں اضافے کی وجہ آئی ایم ایف کے ساتھ معاہدہ نہیں، آئی ایم ایف کے ساتھ میری کیا بات ہوئی تھی؟ مستعفی ہونے کے بعد اسد عمر نے پہلی بار کھل کر باتین کر دیں ، حیرت انگیزانکشافات

آسلام آباد (ویب ڈیسک) سابق وزیر خزانہ اسد عمر نے کہاہے کہ ڈالرکی قیمت میں اضافے کی وجہ آئی ایم ایف کے ساتھ معاہدہ نہیں۔میڈیا سے غیر رسمی بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ آئی ایم ایف کے ساتھ معاہدے میں جب تک میں تھا ایسی کوئی شرط نہیں تھی۔

انہوں نے کہاکہ روپے کی قدر میں کمی کا معاملہ قومی اسمبلی کی خزانہ امور کمیٹی میں اٹھایا ہے، امید ہے کہ میرے موقف کو سمجھا جائے گا، واضح رہے کہ آئی ایم ایف سے کئے گئے معاہدے کے اثرات سامنے آنے لگے ہیںاوپن مارکیٹ کے بعد انٹر بینک میں بھی ڈالر کو پر لگ گئے جمعرات کو انٹربینک مارکیٹ میں ڈالر کی قیمت خرید میں 5.63روپے اور قیمت فروخت میں 6.03روپے کے نمایاں اضافے کے بعد ڈالر کی قدر ملکی تاریخ کی نئی بلندترین سطح پر پہنچ گئی جبکہ اوپن کرنسی مارکیٹ میں بھی ڈالر کی قیمت خریدمیں 2.50روپے اور قیمت فروخت میں 3.55روپے کے اضافے سے نئی بلندترین سطح پر پہنچ گئی، ڈالر کی قیمت میں اضافے کے بعد پاکستان کے بیرونی قرضوں میں 666 ارب روپے کا اضافہ ہوگیاہے۔فاریکس ایسوسی ایشن آف پاکستان کے جاری کردہ اعدادوشمار کے مطابق کو انٹربینک مارکیٹ میں ڈالرکی قیمت خرید میں 5.63روپے اور قیمت فروخت میں 6.03روپے کا نمایاں اضافہ ریکارڈ کیاگیا،جس کے نتیجے میں ڈالر کی قیمت خرید141.37روپے سے بڑھ کر147.00روپے اور قیمت فروخت141.47روپے سے بڑھ کر147.50روپے ہوگئی۔اوپن کرنسی مارکیٹ میں پاکستانی روپے کے مقابلے میں امریکی ڈالر کی قیمت خرید2.50روپے اور قیمت فروخت میں 3.55روپے کااضافہ ریکارڈ کیاگیا،جس کے نتیجے میں امریکی ڈالر کی قیمت خرید143.50روپے سے بڑھ کر146.00روپے اورقیمت فروخت143.95روپے سے بڑھ کر147.50روپے کی بلندترین سطح پر پہنچ گئی۔ اور اب اسد عمر کی یہ ب ات سامنے آئی ہے کہ ؔآئی ایم ایف ڈیل میں ایسی کوئی بات طے ہی نہیں تھی۔ کہ ڈالر کی قیمت کو ایسے برھایا جائے گا۔