’’ زرداری صاحب صاق اور امین ہیں ۔۔۔‘‘ لائیو پروگرام میں لطیف کھوسہ نے جب یہ کہا لیگی رہنماء ’ ملک احمد خان ‘ نے کیا کر دیا؟ ویڈیو نے پاکستانیوں کو ہکا بکا کر دیا

لاہور( مانیٹرنگ ڈیسک) پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنماء لطیف کھوسہ کا کہنا ہے کہ ملک میں اس وقت نواز شریف کو صادق اور امین نہیں کہا جاسکتا کیونکہ انکے خلاف سپریم کورٹ کا آرڈر موجود ہے، عمران خان عدالتی نظریے میں صادق اور امین ہیں لیکن آصف علی زرداری واقعی ہی میں صادق

اور امین ہیں۔ تفصیلات کے مطابق نجی ٹی وی چینل اے آر وائی نیوزن میں ایک پروگرام میں تحریک انصاف کی جانب سے عثمان ڈار، ن لیگ کی جانب سے ملک احمد خان اور پیپلز پارٹی کی جانب سے لطیف کھوسہ موجود تھے جبکہ پروگرام کو سینئر صحافی ارشد شریف ہوسٹ کر رہے تھے۔ پروگرام میں دلچسپ صورتحال اس و قت پیدا ہوئی جب سینئر صحافی نے سوال کیا کہ جب تک آئین کے آرٹیکل 62 ون ایف کے تحت کورٹ کوئی فیصلہ نہیں دیتی تب تک ہر بندہ کو صادق اور امین ہی تسلیم کیا جاتا ہے ، تب تک اس شخص پر کوئی سوال نہیں اُٹھایا جاسکتا ، اس رو سے ابھی تک ایک ہی درخواست سامنے آئی ہے اور وہ سابق وزیر اعظم نواز شریف کے خلاف آئی ہے کہ انہوں نے سچ نہیں بولا ، جس کا جواب دیتے ہوئے لطیف کھوسہ کا کہنا تھا کہ انکے خلاف تو عدالت کی جانب سے فتویٰ آگیا ہے نہ ، اس کو فیصلہ کہیں یا فتویٰ لیکن ابھی تک یہ نواز شریف کے خلاف ہی آیا ہے ، اس کے علاوہ جہانگیر ترین کے خلاف بھی ایک فیصلہ آیا ہے جو کہ سپریم کورٹ کی جانب سے ہی جاری کیا گیا ہے ، اس وقت عمران خان کو صادق اور امین تسلیم نہیں کیا جاسکتا کیونکہ انکے خلاف جو درخواست دائر کی گئی تھی وہ اس کو ثابت ہی نہیں کر پائے ۔ جس پر ارشد شریف کی جانب سے سوال پوچھا گیا کہ اس کا مطلب یہی بنتا ہے کہ اس وقت پاکستان میں دو صادق اور امین لیڈر ہیں ایک عمران خان اور دوسرے آصف علی زرداری؟ جس کا جواب دیتے ہوئے لطیف کھوسہ نے کہا کہ میں سمجھتا ہوں کہ زرداری صاحب تو صادق اور امین ہیں لیکن عمران خان اس لیے نہیں ہیں کیونکہ انکا معیار یہ ہے کہ یوٹرن لینا ، ایک قائد کی تعریف ہے تو اسک مطلب یہی ہے کہ آپ ایک وعدہ کر کے مکر رہے ہیں۔ لطیف کھوسہ کی جانب سے جب زرداری صاحب کو صادق اور امین کہا گیا تو اس وقت پروگرام میں شریک لیگی رہنماء ملک احمد خان اور پی ٹی آئی رہنماء عثمان ڈار مسکرا دیئے جبکہ پروگرام کے ہوسٹ ارشد شریف ہکا بکا رہ گئے ۔ پروگرام میں مزید کیا ہوا ؟ ویڈیو آپ بھی دیکھیں :