؟ پاکستان میں بھونچال جیسی خبر

لاہور (ویب ڈیسک) سوشل میڈیا پر “ابشام زاہد بیہانڈ دی بارز” کے نام سے ایک ٹرینڈ چل رہا ہے ۔ لوگ مطالبہ کر رہے ہیں کہ ابشام نامی نوجوان کو فاطمہ نامی لڑکی کو تنگ کرنے کے جرم میں قید میں ڈالا جائے۔یہ کہانی ایک ٹویٹ سے شروع ہوئی جس میں ایک خاتون نے الزام لگایا

کہ ابشام نامی یہ نوجوان اس کی سہیلی فاطمہ کو ری پ اور جان سے مارنے کی وارننگ دے رہا ہے ۔ متاثرہ لڑکی کے اہلخانہ نے ہر قانونی راستہ اختیار کیا مگر انہیں انصاف نہیں ملا جس کے بعد فاطمہ نے سوشل میڈیا کے ذریعے لوگوں کی حمایت حاصل کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔اس ٹویٹ کے ساتھ ابسام سے منسوب بعض میسجز بھی شیئر کیے گئے ہیں جن میں سے ایک میسج میں کہا گیا ہے کہ ” ابھی بھی آپ کو بول رہا ہوں کہ میرے ساتھ ایک رات گزار لیں ورنہ 30 ہزار میں آج کل لاہور میں Qatal ہوجاتے ہیں ، ایسا نہ ہو آپ کے باپ اس دنیا سے چلے جائیں۔”ایک اور پیغام میں بھی متاثرہ لڑکی کے باپ کو Qatal کرنے کی وارننگ دی گئی ہے۔متاثرہ لڑکی کے مطابق یہ لڑکا اس کا گھر تک پیچھا کرتا ہے، ایک بار اٹھا کر لے جانے کی بھی کوشش کی، اس کے خلاف تمام ثبوتوں کے ساتھ مقدمہ درج کرایا گیا لیکن پھر بھی اس کے خلاف ایکشن نہیں ہوا، ” میرا ہمارے سسٹم سے سوال ہے کہ ان جانوروں کو قید میں ڈالنے کیلئے ہمیں مزید کتنے ثبوتوں کی ضرورت ہوگی۔” متاثرہ لڑکی کے مطابق یہ لڑکا اس کا گھر تک پیچھا کرتا ہے، ایک بار اٹھا کر لے جانے کی بھی کوشش کی، اس کے خلاف تمام ثبوتوں کے ساتھ مقدمہ درج کرایا گیا لیکن پھر بھی اس کے خلاف ایکشن نہیں ہوا، ” میرا ہمارے سسٹم سے سوال ہے کہ ان جانوروں کو قید میں ڈالنے کیلئے ہمیں مزید کتنے ثبوتوں کی ضرورت ہوگی۔”