گیم الٹی چل گئی۔۔۔ حافظ سعید کو سزا سنائے جانے کے بعد کالعدم جماعت الدعوۃ کی اپنے کارکنوں کو دھماکہ خیز اپیل، دشمنان پاکستان کی نیندیں حرام کرن دینے والی خبر

لاہور(ویب ڈیسک)کالعدم جماعت الدعوۃ کے ترجمان نے اپنای جماعت کے سربراہ حافظ محمد سعید کو انسداد دہشت گردی عدالت کی جانب سے مجموعی طور پر 11 برس قید اور جرمانے کی سزاؤں پر سخت ردِعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ حافظ محمد سعید کو سنائی جانے والی سزا سے پاکستان اور کشمیر سمیت ہر صاحب شعور

انسان کا دل افسردہ ہے،یہ سزائیں عالمی دباؤ کے تحت دی گئی ہیں،حافظ محمد سعید کا گناہ کشمیریوں کے لیئے آواز اٹھانا ہے اور انسانیت کی خدمت کرنا ہے جبکہ دوسری طرف بھارت کے جاری ظلم پر دنیا نے آنکھیں بند کی ہوئی ہے، تمام کارکنان سے پر امن رہنے کی اپیل ہے۔تفصیلات کے مطابق حافظ محمد سعید کو انسداد دہشت گردی کی خصوصی عدالت کی جانب سے سزا سنائے جانے کے بعد جماعت الدعوۃ کے ترجمان نے ردِعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ عجب ستم ہے کہ پاکستان کے عوام کی خدمت کرنے والے اور مظلوم کشمیریوں کے لیئے آواز اٹھانے والے آج سزاوار ٹھہرے ہیں،سارا پاکستان اور دنیا جانتی ہے کہ حافظ سعید نے ہر قدرتی آفت میں انسانیت کی مدد کی ہے اور خدمت خلق اور تعلیم کے شعبے میں بے پناہ خدمات پیش کی ہیں لیکن انڈیا کے دباؤ میں آکر اور ایف اے ٹی ایف کو سیاسی طور پر استعمال کر کے پاکستان پر دباؤ ڈالا گیا۔انہوں نے کہا کہ پاکستان کا بچہ بچہ جانتا ہے کہ حافظ سعید اور ان کی جماعت پاکستان کے محسن ہیں اور کسی دہشت گردی میں ملوث نہیں، تمام کارکنان سے پر امن رہنے کی اپیل ہے، کیونکہ ہماری یہ قربانیاں پاکستان کی بقا کے لیے ہیں، اللہ پاکستان کی ہمیشہ حفاظت فرمائے آمین۔ جبکہ دوسری جانب ایک خبر کے مطابق کالعدم جماعۃ الدعوۃ کے سربراہ پروفیسر حافظ محمد سعید کے وکیل محمدعمران فضل گل ایڈووکیٹ نے انسداد دہشت گردی کی عدالت کے فیصلہ پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے اسے ایف اے ٹی ایف کے دباؤ کا نتیجہ قرار دیا ہے ۔میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے معروف قانون دان عمران فضل گل ایڈووکیٹ نے کہاکہ پروفیسر حافظ محمد سعید اور پروفیسر ظفر اقبال کے خلاف اگرچہ کالعدم تنظیم سے تعلق اور پراپرٹیز رکھنے کے جرم میں گیارہ برس قید کی سزا سنائی گئی ہے لیکن عدالت نے واضح طور پر یہ بھی قرار دیا ہے کہ حافظ محمد سعید و دیگر کے خلاف کسی قسم کی دہشت گردی کی معاونت اور غیر قانونی فنڈنگ کا کوئی الزام ثابت نہیں ہو سکا ۔ محمد عمران گل ایڈووکیٹ نے کہاکہ پراسیکیوشن کی طرف سے مقدمات کی سماعت کے دوران جتنے بھی گواہ پیش کئے گئے وہ حافظ محمد سعیداور پروفیسر ظفر اقبال کے خلاف کسی طرح کا کوئی الزام ثابت نہیں کر سکے ۔ انہوں نے کہاکہ عدالتی فیصلہ کا تفصیل سے جائزہ لینے کے بعد جلد آئندہ کا لائحہ عمل طے کریں گے.