’’مریم نواز کو ذاتی حیثیت میں بلایا تھا۔‘‘ قومی احتساب بیورو کا اعلامیہ، (ن) کیخلاف بڑا فیصلہ کرلیا

لاہور (ویب ڈیسک) مریم نواز کی نیب پیشی کے موقع پر ہونے والی ہنگامہ آرائی کے بعد نیب نے پیشی منسوخ کر دی ہے۔ نیب نے اس حوالہ سے اعلامیہ جاری کر دیا ہے جس میں کہا گیا ہے کہ مریم نوازکو ذاتی حیثیت میں طلب کیاگیاتھا،ن لیگی کارکنوں نے غنڈہ گردی کا مظاہر ہ کیا،

نیب ایک قومی ادارہ ہے۔ مسلم لیگ ن کے رہنمائوں و کارکنان کے غیر قانونی اقدام اور کارسرکارمیں مداخلت کی ایف آئی درج کرانے کا فیصلہ کیا گیا ہے، نیب کا کہنا ہے کہ نیب قومی ادارہ ہے،جس کی وابستگیاں ملک و قوم کے ساتھ ہیں،کسی سیاسی جماعت سے تعلق نہیں۔ مریم نواز کی نیب آفس میں پیشی کے موقع پر ن لیگی کارکنان کی جانب سے پولیس پر پتھراؤ کیا گیا,نیب آفس کے باہرلیگی کارکنوں کے پتھراؤ سے 3 اہلکار زخمی بھی ہوئے،پولیس ذرائع کے مطابق مسلم لیگ ن کے 10 کارکنوں کو حراست میں لے لیا، حراست میں لیے گئے کارکنوں کو مختلف تھانوں منتقل کردیا گیا۔ مریم نواز کی نیب پیشی کے موقع پر ن لیگ کے کارکنوں کا نیب آفس کے باہر سیکورٹی اہلکاروں سے جھگڑا ہوا ہے،نیب لاہور کے باہرمسلم لیگ ن کے کارکنوں کی جانب سے پولیس پر پتھراوَ کیا گیا،پولیس نے ن لیگی کارکنان کو نیب آفس جانے سے روکا تو ن لیگی کارکنان بپھر گئے اور پولیس پر پتھراؤ کرنا شروع کر دیا جس پر پولیس کی جانب سے لیگی کارکنوں کو منتشر کرنے کے لیے شیلنگ کا استعمال کیا گیا۔ نیب نے مریم نواز کو مختلف موضع جات کی چودہ سو چالیس کنال اراضی کے متعلق تفتیش کیلئے طلب کیا ہے۔ مسلم لیگ ن نے اپنے کارکنان کو رائیونڈ اور نیب لاہور آفس پہنچنے کی ہدایت کی ہے۔ جس کے بعد نیب آفس لاہور کے باہر سیکیورٹی کے انتظامات بھی کیے گئے اور خاردار تاریں لگا کر راستوں کو بند کر دیا گیا ہے.پولیس کی بھاری نفری نیب آفس کے باہر تعینات ہے اور غیر متعلقہ افراد کو نیب آفس میں جانے کی اجازت نہیں دی جا رہی۔ نیب لاہور نے مریم نواز سے 1440 کنال اراضی کی رسیدیں مانگ لیں،مریم نواز کو تمام دستاویزات 11 اگست کو ہمراہ لانے کی ہدایت کی گئی ہے،مریم نواز کو اراضی سے متعلق تفصیلات جمع کروانے کی ہدایت کی گئی ہے۔ نیب کی جانب سے سوالنامے میں کہا گیا ہے کہ اراضی کی خریداری پر کتنا ٹیکس اور کتنی ڈیوٹی دی مکمل تفصیلات فراہم کریں،حاصل کی گئی زمین کس مقصدکیلئےاستعمال کی جارہی ہے۔