22 کروڑ عوام سے 20 ارب روپے وصول کرنے کا منصوبہ تیار ۔۔۔ تبدیلی سرکار اس منصوبے کے تحت ہر گھر سے کس طرح رقم وصول کرے گی ؟ تشویشناک خبرآگئی

لاہور(ویب ڈیسک) پاکستان ٹیلی ویژن (پی ٹی وی)نے ٹی وی لائسنس فیس بڑھا کر عوام سے اضافی 20 ارب بٹورنے کا منصوبہ تیار کر لیا،ساتھ ہی 6دہائیوں سے مارکیٹنگ پلان بنانے میں ناکام اس ادارے نے 30لاکھ ماہانہ تنخواہوں پر3مارکیٹنگ منیجرز بھی بھرتی کر لئے،جبکہ حکومتی فنڈنگ بھی بند کر دی گئی،

دوسری جانب بورڈ نے اس امر کا اعتراف بھی کیا کہ سرکاری سکرین نہ شائقین کو متوجہ کرتی ہے نہ ہی سرکاری شعبے سے اشتہارات ملتے ہیں۔ذرائع کے مطابق گزشتہ 18 ماہ سے بجلی کی قیمتوں میں 40 فیصد سے زائد کا اضافی بوجھ برداشت کرنیوالے صارفین پر ایک اور بوجھ ڈالنے کی تیاری کی جارہی ہے اور پاکستان ٹیلی ویڑن کارپوریشن (پی ٹی وی) ٹی فی لائسنس فیس بڑھانے کا منصوبہ بنالیا ہے۔ رپورٹ کے مطابق پی ٹی وی بورڈ آف ڈائریکٹرز جس میں زیادہ تر کارپوریشن کے اپنے ملازمین اور دیگر سرکاری حکام شامل ہیں، انہوں نے ایک فنانشل پلان کی منظوری دی ہے جس کے تحت ٹیلی ویڑن لائسنس فیس کو موجودہ 35 روپے ماہانہ سے بڑھا کر بجلی صارفین سے 20 ارب روپے وصول کیے جائیں گے۔دلچسپ بات یہ ہے کہ کارپوریشن نے نجی شعبے سے 3 مارکیٹنگ منیجرز کو مجموعی طور پر 30 لاکھ روپے کی ماہانہ تنخواہوں پر بھرتی کیا ہے، جنہوں نے ملازمین کی مدمت ملازمت کو 2 سال کم کرکے 58 سال کرنے کا ایک فنانشل پلان بنایا ہے، جس سے 15 لاکھ روپے ماہانہ کی بچت ہوگی۔تاہم یہ وہ واحد بچت ہے جو پی ٹی وی اپنے 20 ارب روپے سالانہ یا تقریباً ایک کروڑ 70 لاکھ روپے کے مالی خسارے کیخلاف کرنے پر غور کر رہا ہے۔حیران کن بات یہ ہے کہ سرکاری نشریاتی ادارہ تقریباً 6 دہائیوں میں اپنا مارکیٹنگ پلان بنانے کے قابل نہیں ہوا جبکہ اس کے مقابلے میں کچھ سال قبل آنے والے کئی نجی نشریاتی ادارے منافع کمارہے ہیں، علاوہ ازیں حکومت نے بھی پی ٹی وی کو فنڈنگ روک دی ہے۔ دستیاب دستاویز کے مطابق پی ٹی وی بورڈ آف ڈائریکٹرز نے لائسنسن فیس میں اضافی کی منظوری دیدی ہے اور وہ وزیراعظم سے منظوری خواہاں ہیں۔یہ اضافہ سرکاری ٹیلی ویڑن کی کاروباری ترقی کی حکمت عملی کا حصہ ہے، جسے حال ہی میں بھرتی کی گئی کاروباری ترقی اور مارکیٹنگ ٹیم نے وضع کیا ہے۔