’’پاک فوج میرے ساتھ ہے مجھے کسی کی پرواہ نہیں ۔۔۔‘‘پرویز مشرف کا واپس آنے کا فیصلہ، پاکستان کب آ رہے ہیں؟ تہلکہ خیزتفصیلات

اسلام آباد (ویب ڈیسک)معروف صحافی صابر شاکرکا کہنا ہے کہ پرویز مشرف نےاپنے بیان میں کہا ہے کہ میری صحت میں بہتری آتی ہے تو میں پاکستان جائونگا ، میں مرنا ہی پاکستان چاہتا ہوں ۔ نجی ٹی وی کے پروگرام میں سینئر تجزیہ نگار صابر سے گفتگو کرتے ہوئے سابق صدر پاکستان پرویز مشرف سے

متعلق کہا ہے کہ انہوں نے فیصلہ کر لیا ہےاوروہ پاکستان آنے کیلئے تیار ہیں ،سابق صدرنے خود کہا ہے کہ میری صحت میں بہتری آتے ہی پاکستان چلا جائونگا ۔ بجائے میرے مرنے کا انتظار کرنے اور مجھے گھسیٹنے کے،میں پاکستان جائونگا اور وہیں مرنابھی چاہتا ہوں ۔ واضح رہے کہ اس سے قبل لاہورہائیکورٹ نے سابق صدر پرویز مشرف کی درخواست پر فل بنچ تشکیل دے دیاگیا تھا، فل بنچ 9 جنوری سے درخواست پر سماعت شروع کرے گا، پرویز مشرف نے خصوصی عدالت کا قیام کالعدم قراردینے کی درخواست دی تھی۔ جبکہ دوسری جانب ایک خبر کے مطابق چیف پراسیکیوٹر اے این ایف راجہ انعام امین منہاس نے کہا ہے کہ منشیات برآمدگی کیس کے تقاضے کے مطابق وڈیو سمیت تمام ثبوت و شواہد موجود ہیں، رانا ثنااللہ کے خلاف کیس کا فیصلہ یکطرفہ ہوگا۔راولپنڈی اے این ایف ہیڈ کوارٹرز میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ رانا ثنا اللہ منشیات کیس میں میڈیا پر ایک طرف کے بیانات سامنے آرہے ہیں، یہ تاثر دیا گیا کہ پراسیکیوشن اس میں تاخیر لارہی ہے، ہماری تحقیقاتی تاریخ سب کے سامنے ہے ہم نے تاخیر کے لیے کوئی درخواست نہیں دی، اے این ایف کی جانب سے تمام کام مکمل کیا گیا۔پراسیکیوٹر اے این ایف نے بتایا کہ منشیات برآمدگی کیس کی ایف آئی آر یکم جولائی 2019 کو درج ہوئی، ہم نے 23 جولائی کو چالان جمع کرادیا، جس کے تمام ثبوت عدالت میں پڑے ہوئے ہیں، چالان میں 15 کلوگرام برآمدگی ہیروئن، 15 گواہ، 3 گواہوں کے بیانات، کیمیکل ایگزیمینر کی رپورٹ اورموقع کی فوٹیج کی سی ڈی بھی ساتھ لگی ہوئی ہے۔ان کا کہنا تھا کہ ملزمان کو صرف ایک گراونڈ پیرا فور کے تحت ضمانت ملی جو سیف سٹی کی سی سی ٹی وی فوٹیج کی تھی، اس کیس کی اہمیت وڈیو فوٹیجز نہیں اس کیس کی اہمیت ملزم سے منشیات کی برآمدگی ہے، صرف وڈیو کو بنیاد بنا کر وہ کہہ رہے ہیں کیس کمزور ہے۔